چین: ’آئی پیڈ کے لیےگردہ فروخت کر دیا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

چین کے سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق ایک نوجوان لڑکے کی جانب سے اپیل کا آئی فون اور آئی پیڈ خریدنے کے لیے اپنا گردہ فروخت کرنے کے واقعے کے بعد چھ افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔

سرکاری خبر رساں ادارے زنہوا نیوز کے مطابق جنوبی چین کے علاقے میں اس واقعے کے ملوث ایک سرجن ڈاکٹر بھی گرفتار کیے جانے والے افراد میں شامل ہیں۔

اس سرجن ڈاکٹر نے گزشتہ سال اپریل میں نوجوان لڑکے کا گردہ نکلا تھا۔

اس نوجوان لڑک کا نام صرف وینگ بتایا گیا ہے اور اس نے گردے کے عوض تین ہزار ڈالر وصول کیے تھے جب کہ گردوں کی فروخت کرنے والے گروہ نے پینتیس ہزار ڈالر کا معاوضہ لیا تھا۔

اطلاعات کے مطابق آئن لائن چیٹ کے ذریعے اس لڑکے کو غیر قانونی طور پر گردہ فروخت کرنے پر قائل کیا گیا تھا۔

گردے کی فروخت کا انکشاف اس وقت ہوا جب لڑکے کی ماں نے بیٹے کے پاس اپیل کی نئی مصنوعات دیکھیں، ماں کے پوچھنے پر لڑکے نے اعتراف کیا کہ اس نے گردہ فروخت کر کے یہ آلات خریدے ہیں۔

چین میں اپیل کی مصنوعات بہت مقبول ہیں تاہم ان کی قیمت دیہات میں رہنے والے زیادہ تر افراد کی قوت خرید سے باہر ہیں۔

اس کے علاوہ چین میں انسانی اعضاء عطیہ کرنے والے افراد کی بھی شدید کمی ہے۔ حکام کے مطابق چین میں سالانہ پندرہ لاکھ افراد کو اعضا تبدیل کرانے کی ضرورت ہوتی ہے تاہم صرف دس ہزار ہی ٹرانسپلانٹ کیے جاتے ہیں۔

چین میں قیدیوں کو سزائے موت دیے جانے کے بعد ان کے عضاء ٹرانسپلانٹ کے لیے استعمال ہوتے ہیں تاہم اب چین نے اس سلسلے کو بھی آئندہ پانچ سال کے دوران ختم کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اسی بارے میں