امریکہ میں جی ایٹ ممالک کا اجلاس

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

دنیا کی آٹھ بڑی معاشی طاقتوں یا جی ایٹ کے رہنماؤں کا اجلاس سنیچر کو امریکہ میں ہو رہا ہے۔

امریکی صدر براک اوباما آج کیمپ ڈیوڈ میں دنیا کے آٹھ امیر ترین ممالک، جی ایٹ کے سربرہان کی میزبانی بھی کر رہے ہیں۔

جی ایٹ کے اس اجلاس پر یورو کرنسی استعمال کرنے والے ممالک خصوصاً یونان کا معاملہ حاوی ہو گیا ہے۔

خیال کیا جا رہا ہے معاشی اور سیاسی عدم استحکام کی وجہ سے یونان، یورو کرنسی والے اتحاد، یورو زون سے باہر ہو جائے گا۔

دوسری جانب سرمایہ کاروں کو خدشہ ہے کہ مالی بحران کے باعث یونان کے یورو زون سے اخراج کی وجہ سے ایک نیا عالمی بحران شروع ہو سکتا ہے۔

امریکہ میں حکام کے مطابق جی ایٹ کے رہنماؤں نے ایران اور شمالی کوریا کے جوہری معاملے اور شام کی صورت حال پر بھی بات چیت کی۔

بات چیت میں اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ اگر شمالی کوریا نے اپنی اشتعال انگیز اقدامات کو بند نہ کیا تو اسے مزید تنہا کر دیا جائے گا۔

اس سے پہلے امریکی صدر براک اوباما اور فرانس کے نو منتخب صدر فرانسوا اولاند کے درمیان جمعہ کو وائٹ ہاؤس میں ملاقات ہوئی جس میں اقتصادی ترقی پر توجہ دینے پر اتفاق کیا گیا۔

اس موقع پر فرانسوا اولاند کا کہنا تھا کہ وہ اور صدر اوباما چاہتے ہیں کہ یونان کو ہر حال میں یورو زون رہنا چاہیے جبکہ صدر اوباما کا کہنا تھا کہ یونان کی صورتِ حال نہ صرف یورپ بلکہ پوری دنیا کے بہت اہم ہے۔

صدر اوباما کا مذید کہنا تھا کہ وہ جی ایٹ کے رہنماؤں کے ساتھ نتیجہ خیز مزاکرات چاہتے ہیں۔

اس سے پہلے جرمن چانسلر مرکل نے جمعہ کو تجویر دی تھی کہ یونان آئندہ ماہ ہونے والے عام انتخابات کے دوران یورو زون میں رہنے کے حوالے سے ریفرنڈم کروائے۔

یونان کے عبوری وزیرِاعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا کہ جرمن چانسلر مرکل نے یہ تجویز صدر کارلوس پاپولیاس کے ساتھ ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو میں دی تھی۔

یونان میں ہونے والے انتخابات کے بعد اتحادی حکومت کی ناکامی کے بعد عبوری حکومت نے گزشتہ ہفتے حلف اٹھایا تھا۔

یونان میں اب نئے انتخابات سترہ جون کو منعقد ہوں گے۔

سنیچر کو کیمپ ڈیوڈ میں منعقد ہونے والے اجلاس میں توقع ہے جی ایٹ میں شامل امریکہ، جرمنی، فرانس، برطانیہ، جاپان، روس، اٹلی اور کینڈا کے رہنماؤں کے درمیان یورو اتحاد کے ممالک میں جاری مالی بحران کا معاملہ سرفہرست رہے گا۔

جی ایٹ کے سربراہی اجلاس میں ایران کے جوہری پروگرام کے علاوہ شام میں جاری تشدد کے خاتمے پر بھی بات چیت ہو گی۔

اسی بارے میں