تمل ٹائیگرز کے سنائپرز قومی شوٹنگ ٹیم میں

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ان میں سے کچھ کو خودکش بمبار بننے کی تربیت دی گئی تھی جبکہ منتخب شدہ بہترین تیراک باغیوں کی بحریہ کا حصہ تھے

سری لنکا کی وزارتِ کھیل کے مطابق تمل ٹائیگرز کے کچھ سابقہ سنائپرز کو قومی شوٹنگ ٹیم میں شامل کر لیا ہے۔

ان کا انتخاب ایک ٹیلنٹ کیمپ میں کیا گیا جو کہ خصوصی طور پر سابقہ جنگجوؤں کے لیے لگایا گیا تھا۔

سولہ منتخب شدہ کھلاڑیوں میں سے کچھ شوٹنگ جبکہ باقی سری لنکا کی تیراکی، ایتھلیٹکس اور کرکٹ میں نمائندگی کریں گے۔

وزارت کھیل کے ترجمان ہراشا ابیکون نے بتایا کہ ان میں سے کچھ کو خودکش بمبار بننے کی تربیت دی گئی تھی جبکہ منتخب شدہ بہترین تیراک باغیوں کی بحریہ کا حصہ تھے۔

یاد رہے کہ سری لنکا کی بحریہ نے دو ہزار نو میں چھبیس سال کی خانہ جنگی کے بعد تمل باغیوں کو شکست دی تھی۔

منتخب شدہ کھلاڑی یا تو حکومت کے بحالی پروگراموں میں حصہ لے رہے ہیں یا اپنی تربیت مکمل کر کے اپنے متعلقہ کھیل کے اداروں کے ساتھ ہیں۔

سرکاری نمائندگان کے بقول ان میں سے کچھ اگلے سال جنوبی ایشیائی کھیلوں میں حصہ لیں گے۔

ہراشا ابیکون کے مطابق ایک سو پینتیس سابقہ باغیوں نے بحالی کے پروگرام کے دوران تیراکی، نشانہ بازی، ٹینس اور بیڈمنٹن میں حصہ لینے میں دلچسپی ظاہر کی۔ اسی طرح انہوں نے بتایا کہ ایک اور منصوبے کے تحت معذور سابقہ باغیوں اور فوجیوں پر مشتمل ایک ٹیم پر کام ہو رہا ہے۔

سری لنکا نے اب تک تقریباً گیارہ ہزارہ سابقہ باغیوں کو خصوصی کیمپوں میں بحال کیا ہے اور مزید چھ سو تیس کو بحالی کے عمل سے گزارا جا رہا ہے۔

ریڈ کراس کو ان کیمپوں تک رسائی نہیں ہے اور کئی انسانی حقوق کے تنظیموں نے اس سارے عمل پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ لیکن حکومت اس بات پر مصر ہے کہ یہ بڑا مؤثر عمل ہے۔

اسی بارے میں