امریکی صدارتی امیدوار کی اسرائیل کی حمایت

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ماہرین کا کہنا ہے کہ رامنی امید کر رہے ہیں کہ اسرائیل کی حمایت کی تائید انہیں آئندہ صدارتی انتخاب میں مدد کرئے گی

امریکہ میں ریپبلکن پارٹی کے صدارتی امیدوار مٹ رامنی کا کہنا ہے کہ ایران کو جوہری ہتھیار بنانے سے روکنا امریکہ کی اخلاقی ذمہ داری ہے۔

یروشلم میں بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دنیا کو غیر مستحکم کرنے کے لیے ایران سب سے بڑا خطرہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ اسرائیل کے حقِ دفاع کا احترام کرتے ہیں اور امریکہ کا اسرائیل کی حمایت کرنا درست ہے۔

انہوں نے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت بھی پکارا جسے اعلیٰ فلسطینی حکام نے ناقابلِ قبول قرار دیا۔

قدیم یروشلم کے پس منظر میں کھڑے انہوں نے کہا کہ ایران کے آیت اللہ ہمارے اخلاقی صبر کا امتحان لے رہے ہیں۔

’وہ جاننا چاہتے ہیں کہ کون انہیں روکے گا اور کون نظر انداز کرے گا۔ ہم نہ تو (ایرانی رویے کو) نظر انداز کریں گے اور نہ ہی ہمارا ملک کبھی اسرائیل سے دوستی اور تعلقات کو نظر انداز کرے گا‘۔

اس سے پہلے مٹ رامنی کے ایک مشیر ڈین سینر کا کہنا تھا کہ صدارتی امیدوار اسرائیل کے ایران کے خلاف طاقت کے استعمال کے کسی بھی فیصلے کا احترام کریں گے۔

دوسری جانب صدر براک اوباما نے ایران کے خلاف پابندیاں عائد کرنے پر زور دیتے رہے ہیں۔

طاقت کے براہِ راست استعمال کا واضح ذکر نہ کرتے ہوئے مٹ رامنی نے کہا کہ ایران کو جوہری راستے سے ہٹانے کے لیے امریکہ کو ہر ممکنہ طریقہِ کار استعمال کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ سفارتی اور اقتصادی پابندیاں یہ کام کر سکیں گی تاہم آخر میں کوئی بھی آپشن خارجِ الامکان نہیں۔

اس سے پہلے اتوار کے روز انہوں نے اسرائیلی وزیرِ اعظم بنیامن نیتن یاہو اور صدر شمعون پیریز سے ملاقاتیں کیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ رامنی امید کر رہے ہیں کہ اسرائیل کی حمایت کی تائید انہیں آئندہ صدارتی انتخاب میں مدد کرے گی۔

اس کے علاوہ انہوں نے فلسطینی وزیرِاعظم سلام فیاد سے بھی ملاقات کی تاہم وہ صدر محمود عباس سے نہیں ملے۔

مٹ رامنی کے بین الاقوامی دورے کی پہلی کڑی کچھ اچھی نہیں رہی۔ برطانیہ میں لندن اولمپک مقابلوں کے بارے میں پہلے انہوں نے کہا تھا کہ تیاریوں کی چند علامات تشویشناک ہیں تاہم بعد میں اپنا بیان واپس لیتے ہوئے انہوں نے کامیاب ترین مقابلوں کی پیش گوئی کی تھی۔

اسی بارے میں