کانگو: کان منہدم ہونے سے درجنوں ہلاک

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 16 اگست 2012 ,‭ 13:22 GMT 18:22 PST
کانگو کان

کانگو میں سونے اور ٹن کی کانوں سے حاصل ہونے والے منافعے کو تشدد کے لیے استعمال کیا جاتا ہے

حکام کے مطابق جنوب مشرقی کانگو ری پبلک میں سونے کی کان کے اندر ایک ستون گرنے سے ساٹھ کان کن ہلاک ہو گئے ہیں۔

مقامی ذرائعِ ابلاغ کے مطابق اوریئنتالے صوبے میں پیر کے روز جب یہ حادثہ پیش آیا اس وقت کان کن سطحِ زمین سے ایک سو میٹر نیچے تھے۔

ایک مقامی عہدے دار کے مطابق امدادی کارکنوں کو کان تک پہنچنے میں مشکلات کا سامنا ہے کیوں کہ یہ کان جس جنگل کے اندر واقع ہے وہاں مسلح افراد کا راج ہے۔

کانگو میں اس طرح کے حادثات عام ہیں کیونکہ کانوں پر اکثر حفاظتی قواعد و ضوابط لاگو نہیں کیے جاتے۔

بظاہر کانگو کے وسیع معدنی ذخائر ملک میں نسلی فسادات کو ہوا دینے کا باعث بنتے ہیں، جب کہ دوسری طرف کانگوں کی زیادہ تر آبادی غربت کا شکار ہے۔

اے ایف پی خبررساں ادارے کے مطابق یہ حادثہ ممباسا سے ایک سو بیس کلومیٹر دور پین گوئے کے مقام پر پیش آیا جہاں غیرقانونی کان کنی کی جاتی ہے۔

مقامی حکومت کے سربراہ نے اقوامِ متحدہ کی سرپرستی میں چلنے والے ریڈیو کو بتایا کہ فوج اور ایک مقامی مسلح تنظیم کے درمیان جھڑپوں کے بعد اس کان پر حال ہی میں کام بند کر دیا گیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔