لخدار براہیمی شام کے مشترکہ ایلچی مقرر

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 18 اگست 2012 ,‭ 22:23 GMT 03:23 PST

لخدار براہیمی سنہ انیس سو اکانوے سے لیکر سنہ انیس سو ترانوے تک الجیریا کے وزیرِ خارجہ کے طور کام کر چکے ہیں

الجیریا سے تعلق رکھنے والے تجربہ کار سفارت کار لخدار براہیمی کو شام کے لیے اقوام متحدہ اور عرب لیگ کا مشترکہ ایلچی مقرر کر دیا گیا ہے۔

اٹھہتر سالہ لخدار براہیمی شام کے لیے اقوام متحدہ اور عرب لیگ کے مشترکہ ایلچی کوفی عنان کی جگہ لیں گے۔

واضح رہے کہ کوفی عنان نے شام کے مسئلے پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں عدم اتفاق پر گزشتہ دنوں مستعفی ہو گئے تھے۔

لخدار براہیمی اس سے پہلے افغانستان اور عراق میں بھی اقوام محتدہ کے سیفر کی حیثیت سے خدمات سر انجام دے چکے ہیں۔

لخدار براہیمی کو شام کے لیے اقوام متحدہ اور عرب لیگ کا مشترکہ ایلچی بنانے کا اعلان اقوام متحدہ کی جانب سے شام میں امن مشن کے خاتمے کے اعلان کے ایک روز بعد کیا گیا ہے۔

عرب لیگ کے ایک سینئیر رہنما کے طور پر لخدار براہیمی سنہ انیس سو چوراسی سے سنہ انیس سو اکانوے کے درمیان لبنان میں خانہ جنگی کے خاتمے کے لیے ایک معاہدہ کروا چکے ہیں۔

لخدار براہیمی سنہ انیس سو اکانوے سے لیکر سنہ انیس سو ترانوے تک الجیریا کے وزیرِ خارجہ کے طور کام کر چکے ہیں۔

لخدار براہیمی کو سنہ انیس سو چھیانوے سے اٹھانوے اور سنہ دو ہزار ایک سے دو ہزار چار تک اقوام متحدہ کی جانب سے افغانستان کا سفیر تعینات کیا گیا تھا۔

دوسری جانب اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے لخدار براہیمی کی تعیناتی کا خیر مقدم کیا ہے۔

بان کی مون کے ترجمان کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان میں امید ظاہر کی گئی ہے کہ لخدار براہیمی شام میں جاری تشدد کو ختم کروانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔

لخدار براہیمی نے بی بی سی کو بتایا شام کے مسئلے کے پرامن حل کے لیے سب کو مل کر کام کرنا ہو گا۔

انہوں نے کہا ’اس بات میں کوئی شک نہیں کہ میں اقوام متحدہ کی حمایت کے بغیر کچھ بھی نہیں کر پاؤں گا۔‘

شام میں حزب مخالف ارکان کے مطابق صدر بشارالاسد کے خلاف گزشتہ سال مارچ سے شروع ہونےوالے مظاہروں میں ایک اندازے کے مطابق اب تک بیس ہزار سے زیادہ افراد ہلاک جبکہ ہزّاروں بے گھر ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔