صدر مرسی کے مصر کے دورے کا امکان

آخری وقت اشاعت:  اتوار 19 اگست 2012 ,‭ 05:05 GMT 10:05 PST

حال ہی میں مصری صدر مرسی نے فوج کے سپہ سالار فیلڈ مارشل محمد حسین طنطاوی کو ان کے عہدے سے برطرف کر دیا تھا

مصری ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ صدر محمد مرسی اگست کے آخر میں غیر جانبدار ممالک کی تحریک ’نان الائنڈ موومنٹ‘ کے اجلاس میں شرکت کے لیے ایران کا دورہ کریں گے۔

یہ ممکنہ دورہ سنہ انیس سو انہتر میں ایران میں آنے والے انقلاب کے بعد کسی مصری سربراہ کا پہلا دورۂ ایران ہوگا۔

ماضی میں آنے والی اطلاعات کے مطابق انہوں نے اس دورے پر اپنے نائب محمود میکی کو بھیجنا تھا۔

امریکہ اور سویت یونین کے درمیان سرد جنگ کے دوران تشکیل پانے والی غیر جانبدار ممالک کی یہ تحریک ترقی پزیر ممالک کے مفادات کے تحفظ کے لیے بنائی گئی تھی۔

کئی دہائیوں کے تناؤ کے بعد صدر محمد مرسی کے دورے سے ایران اور مصر کے تعلقات میں بہتری کا آغاز ہو سکتا ہے۔

مصر کے اسرائیل کی ریاستی حیثیت کو سرکاری سطح پر تسلیم کرنے اور ایران میں انقلاب کے بعد ان دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات کو ٹھیس پہنچی تھی۔

سابق صدر حسنیٰ مبارک کے دور میں مصر، شیعہ اکثریت والے ایران کے مقابلے میں سعوی عرب اور سنی اکثریت والے دیگر عرب ممالک کا ساتھ دیتا رہا ہے۔

جون میں جب ایک ایرانی خبر رساں ایجنسی نے صدر مرسی کی جانب سے یہ بیان شایع کیا کہ وہ ایران کے ساتھ تعلقات بہتر کرنے کی کوشش کریں گے تو مصری صدر کا کہنا تھا کہ وہ ایجنسی کے خلاف عدالتی کارروائی کریں گے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔