مرنے کے حق کی لڑائی لڑنے والا مر گیا

آخری وقت اشاعت:  بدھ 22 اگست 2012 ,‭ 17:19 GMT 22:19 PST
ٹونی نکلنسن

ٹونی نکلنسن اپنی بیوی اور بیٹیوں کے ہمراہ ولٹشائر میں اپنے گھر میں

’لوکڈ ان سنڈروم‘ جیسی بیماری میں مبتلا برطانوی شہری ٹونی نکلنسن کا، جو کہ اس بات کے لیے قانونی لڑائی لڑ رہے تھے کہ انہیں یہ حق دیا جائے کہ ڈاکٹر ان کو قانونی طور پر موت کی نیند سلا سکیں، انتقال ہو گیا ہے۔

اٹھاون سالہ ٹونی نکلنسن گردن سے نیچے تک فالج زدہ تھے۔ انہیں 2005 میں فالج کا دورہ پڑا تھا اور وہ اپنی اس حالت کو ایک عذاب کی زندگی کہتے تھے۔

ولٹشائر کے علاقے ملکشام کے رہائشی نکلنسن گزشتہ ہفتے ہی ڈاکٹروں کے ہاتھوں موت دیے جانے کے حق کی قانونی جنگ ہارے ہیں۔ ہائی کورٹ نے ان کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

ان کی خاندانی معالج کا کہنا ہے کہ انہوں نے اس کے بعد کھانا پینا چھوڑ دیا تھا۔

ڈاکٹر سائمو چاہال نے کہا کہ نکلنسن کا انتقال برطانوی وقت کے مطابق صبح دس بجے ہوا۔ ان کے انتقال کے وقت ان کے ہمراہ ان کی بیوی جین اور دو بیٹیاں لورین اور بیتھ تھیں۔

سائمو کے مطابق نکلنسن کی بیوی جین نے انہیں بتایا کہ گزشتہ اختتام ہفتہ سے نمونیہ ہونے کے بعد ان کی حالت ابتر ہوتی جا رہی تھی۔

ان کی بیوی کا کہنا ہے کہ ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد نکلنسن کا دل ٹوٹ گیا تھا۔ ہائی کورٹ نے نئے ڈاکٹر کی مدد سے نکلنسن کے اپنی جان دینے کے حق کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

ان کو اس بات کی سمجھ نہیں آئی کہ کس طرح ان کی اپنی موت لینے کے حق کی قانونی دلیل کامیاب نہ ہو سکی۔

ان کی اہلیہ کے بقول انہوں نے کہا: ’میں اپنے مستقبل اور جو اس کے ساتھ اذیت آئے گی بہت خوفزدہ ہوں۔‘

نکلنسن کا ایک ذاتی ٹوئٹر اکاؤنٹ بھی ہے جس کو ان کے خاندان والوں نے اپ ڈیٹ کیا ہے۔

ان کے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر آنے والے پیغام میں لکھا ہے: ’آپ کو پتہ ہو گا کہ آج صبح میرے والد کی طبعی موت ہوئی۔ ان کی عمر اٹھاون برس تھی۔ انہوں نے موت سے پہلے ہمیں یہ ٹویٹ کرنے کا کہا تھا کہ الودع دنیا، اب وقت آ گیا ہے۔ میں نے کافی مزا کیا۔‘

.

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔