چین:اعلی اہلکار لاکھوں ڈالر لے کر فرار

آخری وقت اشاعت:  بدھ 29 اگست 2012 ,‭ 15:10 GMT 20:10 PST

چین کے مرکزی بینک کے مطابق گزشتہ کئی برسوں میں بدعنوان سرکاری اہل کار اربوں ڈالر کی خرد برد کر چکے ہیں۔

چینں میں میڈیا کے مطابق ملک کے شمال مشرقی صوبے لیاؤننگ میں ایک سابق اعلیٰ پارٹی عہدیدار لاکھوں ڈالر لے کر امریکہ فرار ہو گئے ہیں۔

اخبار پیپلز ڈیلی کے مطابق وانگ گاؤکیانگ صوبہ لیاؤننگ کے شہر فینگ چینگ کے پارٹی سیکرٹری تھے جو اپریل میں اپنی اہلیہ کے ساتھ امریکہ چلے گئے۔

اخبار نے سرکاری اہلکاروں کے حوالے سے بتایا کہ وانگ گاؤ کیانگ کو بدعنوانی کے الزمات کے تحت عہدے سے ہٹایا گیا تھا اور ان کے خلاف تحقیقات ہو رہی تھیں۔

کئی اطلاعات کے مطابق وہ بیس کروڑ یوان یعنی تین کروڑ پندرہ لاکھ امریکی ڈالر ساتھ لے گئے ہیں۔

مقامی سرکاری اہلکاروں نے وانگ گاؤکیانگ کے خلاف خرد برد اور رقم امریکہ لے جانے کے الزامات کے بارے کچھ زیادہ تفصیل نہیں بتائی۔

خیال کیا جاتا ہے کہ گاؤ کیانگ کا خاندان امریکہ میں مقیم ہے۔

منظر عام پر آنے سے پہلے اس سکینڈل کے متعلق افواہیں کچھ عرصہ انٹرنیٹ پر گردش کرتی رہی تھیں۔

شہر کی ویب سائٹ کے مطابق شہر کے ناظم یان چوان نے فینگ چینگ کے پارٹی سیکرٹری کا عہدہ سنبھالا۔

چین کے وزیرِ اعظم وین جیاباؤ اس سے پہلے کئی بار کہہ چکے ہیں کہ کمیونسٹ پارٹی کے اقتدار کے لیے سب سے بڑا خطرہ بدعنوانی ہے۔

بیجنگ میں بی بی سی کے نامہ نگارمارٹن پیشنس کے مطابق سرکاری اہلکاروں کی بدعنوانیوں کی وجہ سے چینی عوام میں سخت غصہ پایا جاتا ہے۔

"کمیونسٹ پارٹی کے اقتدار کے لیے بدعنوانی سب سے بڑا خطرہ ہے۔"

چینی پریمیئر وین جیاباؤ

ان کا مزید کہنا تھا کہ بڑے رہنماؤں کا معاشی احتساب نہیں ہوتا جب کہ چھوٹے لیڈر سکیینڈلوں کی زد میں آ جاتے ہیں۔

گلوبل ٹائمز اخبار کے تبصرے میں صوبائی حکام سے مطالبہ کیا گیا کہ عوام میں قیاس آرائیاں ختم کرنے کے لیے اس کیس کے بارے میں مزید معلومات فراہم کی جائیں۔

تبصرے میں کہا گیا ہے کہ ’وانگ کا ملک سے بھاگ نکلنا ایک سکینڈل ہے اور بہتر ہوگا کہ سرکاری اہل کار ایسے سکینڈل کو چھپائیں لیکن یہ ناممکن ہے۔‘

چین میں معلومات کی ترسیل انیس سو نوے کی دہائی کے مقابلے میں اب کافی تیز ہو گئی ہے۔ خبر کتنی ہی بری ہو جلد یا بدیر عوام تک پہنچ ہی جاتی ہے۔

گذشتہ برس چین کے مرکزی بینک نے ایک رپورٹ جاری کی تھی جس میں ظاہر کیا گیا تھا کہ ایک سو بیس ارب سے زیادہ امریکی ڈالر بدعنوان سرکاری اہلکار بیرونِ ممالک لے اُڑے ہیں جن کی اکثریت نے امریکہ کا رخ کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق انیس سو نوے کی دہائی سے لے کر دو ہزار آٹھ تک سرکاری کمپنیوں کے سولہ سےاٹھارہ ہزار تک ملازمین خرد برد کر کے ملک چھوڑ چکے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔