میکسیکو: سڑک سے سولہ لاشیں برآمد

آخری وقت اشاعت:  منگل 11 ستمبر 2012 ,‭ 07:14 GMT 12:14 PST

سنہ دو ہزار چھ میں صدر فرنانڈو کالڈرون نے منشیات کے گروہوں کے خلاف فوج کا استعمال شروع کر دیا تھا

میکسیکو میں پولیس حکام کا کہنا ہے کہ مغربی صوبے گوئیریرو میں سڑک کنارے انہیں ایک ویگن ملی ہے جس سے سولہ افراد کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

ایک مقامی اہلکار کا کہنا ہے کہ لاشوں میں گولیوں کے کئی نشان ہیں۔ لاشوں کی ابھی تک شناخت نہیں ہو سکی ہے۔

پولیس کا ماننا ہے کہ یہ افراد دو مقامی منشیات فروش گروہوں مکوآنکان فیملی اور نائٹس ٹیمپلار کے درمیان جاری کشیدگی کی وجہ سے مارے گئے ہیں۔

اس سے پہلے گذشتہ ماہ بھی ایک قریبی شاہراہ سے حکام کو گیارہ لاشیں ملی تھیں۔

گوئیریرو صوبے کے گورنر اینجل اگوئائر کا کہنا تھا کہ ہلاک ہونے والے سولہ افراد کا تعلق ہمسایہ صوبے مکوآنکان سے ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’میرے پاس اس وقت جو معلومات ہیں، ان کے مطابق یہ وہ لوگ ہیں جو کہ مکوآنکان صوبے میں ایک جھڑپ میں مارے گئے اور پھر انہیں یہاں لایا گیا‘۔

انہوں نے کہا کہ وہ صوبے میں وفاقی پولیس اور زیادہ فوجیوں کی تعیناتی کی درخواست کریں گے۔

آئندہ یکم دسمبر کو حلف اٹھانے والے میکسیکو کے منتخب صدر انریقے پینا نیئتو کے لیے منشیات سے متعلق فسادات پر قابو پانا ایک اہم چیلنج ہے۔

سنہ دو ہزار چھ میں صدر فرنانڈو کالڈرون کی جانب سے منشیات کے گروہوں کے خلاف فوج کے استعمال سے اب تک پچپن ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔