’گیارہ ستمبر کے بعد امریکہ زیادہ مضبوط ہوا‘

آخری وقت اشاعت:  بدھ 12 ستمبر 2012 ,‭ 19:11 GMT 00:11 PST

یہ پہلی بار ہے کہ سیاسی شخصیات نیویارک میں گیارہ ستمبر کے حوالے سے کوئی خطاب نہیں کریں گے۔

امریکی صدر براک اوباما نے نائن الیون حملوں کی گیارہویں برسی کے موقع پر کہا ہے کہ امریکہ ہلاکتوں اور دہشت کے دن سے ’زیادہ مضبوط‘ ہو کر نکلا ہے۔

نیویارک میں ہلاک ہونے والوں کے رفقاء اور دوسرے لوگ جمع ہو کر ورلڈ ٹریڈ سنٹر، واشنگٹن اور پینسلوینیا میں ہلاک ہونے والے افراد کے نام گیارہ ستمبر کی یادگار پر پڑھ رہے ہیں۔

صدر اوباما نے پینٹاگان میں یادگار پر پھول چڑھائے اور نائب صدر جو بائڈن امید ہے کہ شینکس ویلے گاؤں میں خطاب کریں گے جہاں پرواز نمبر ترانوے گر کر تباہ ہو گئی تھی۔

یہ پہلی بار ہے کہ سیاسی شخصیات نیویارک میں کوئی خطاب نہیں کریں گے۔

پینٹاگان میں صدر اوباما نے ہلاک ہونے والوں کے رشتہ داروں اور بچ جانے والوں سے خطاب کیا۔ انہوں نے ہلاک ہونے والوں کے پیاروں کو بتایا کہ جو ہلاک ہوئے انہیں کبھی بھی نہیں بھلایا جا سکے گا اور ’انہوں نے ہمیں آج کا امریکہ بنانے میں مدد کی‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’گیارہ ستمبر کی صحیح میراث خوف یا نفرت یا تقسیم نہیں ہے بلکہ ایک محفوظ دنیا، ایک مضبوط قوم اور افراد جو پہلے سے زیادہ متحد ہیں‘۔

گیارہ ستمبر کی قومی یادگار نے اعلان کیا کہ اس سال گراؤنڈ زیرو پر ہونے والی تقریب میں صرف رشتہ دار اور عزیز شامل ہوں گے اور ہلاک ہونے والوں کے نام پڑھیں گے۔

پینٹاگان میں صدر اوباما نے ہلاک ہونے والوں کے پیاروں کو بتایا کہ جو ہلاک ہوئے انہیں کبھی بھی نہیں بھلایا جا سکے گا اور ’انہوں نے ہمیں آج کا امریکہ بنانے میں مدد کی‘۔

یادگار کے صدر جو ڈینئلز نہ کہا کہ ایک انتخابات کے سال میں ’وہ ہلاک ہونے والوں اور ان کے خاندانوں کو یاد رہے ہیں سیاست سے پاک ہو کر‘۔

چارلس وولف جن کی اہلیہ کیتھرین وولف ورلڈ ٹریڈ سنٹر میں ہلاک ہونے والوں میں شامل تھیں کا کہنا تھا کہ منتخب نمائندوں کی غیر موجودگی اس سارے واقعے کو اور زیادہ ذاتی بنا دے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ ’ہم اب اس گہری بحیثیت مجموعی قومی سوگ کے دور سے نکل آئے ہیں‘۔

گیارہ ستمبر کو ہونے والے حملوں میں تینں ہزار افراد ہلاک ہوئے تھے جب القاعدہ کے اراکین نے مختلف طیارے اغوا کر کے ورلڈ ٹریڈ سنٹر، پینٹا گان کی عمارتوں میں ٹکرا دیے تھے۔ ان میں سے ایک طیارہ پینسلوینیا میں گر کر تباہ ہو گیا تھا۔

صدر اوباما اور خاتون اول مشعل اوباما نہ آج امریکہ میں صبح کے وقت اس واقعے کی یاد میں ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی۔

اس کے بعد انہوں نے پینٹاگان کی تقریب میں شرکت کے بعد والٹر ریڈ کے فوجی طبی مرکز میں زخمی فوجیوں کی عیادت کی۔

امریکہ میں انتخابات کا سال ہونے کی وجہ سے دونوں مرکزی امیدواروں صدر اوباما اور ان کے مخالف مٹ رومنی نے اپنی انتخابی مہم ایک دن کے لیے روک دی اور ایک دوسرے کے خلاف منفی اشتہارات بھی نہیں چلائے۔

نیو یارک میں زیر تعمیر میوزیم ابھی تک زیر تکمیل ہے اگرچہ منصوبے کے مطابق اس اس سال مکمل ہونا تھا۔

تعمیر کرنے والے افسران کے مطابق اسے ایک اور سال درکار ہو گا مکمل ہونے میں۔

اسی طرح دو ہزار چودہ میں ورلڈ ٹریڈ سنٹر کی جگہ پر شمال مغربی جانب ایک اور عمارت تین اعشاریہ نو ارب کی لاگت سے مکمل ہوگی۔

امریکی نائب صدر جو بائڈن امید ہے کہ شینکس ویلے گاؤں میں خطاب کریں گے جہاں پرواز نمبر ترانوے گر کر تباہ ہو گئی تھی۔

اسی جگہ پر بننے والے ایک بیرونی یادگار جس کا افتتاح پچھلے سال کیا گیا تھا کو اب تک تقریباً پینتالیس لاکھ افراد نے دیکھا ہے۔

پچھلے سال ہی امریکی کمانڈو سیلز کی ایک ٹیم نے اسامہ بن لادن کو پاکستان میں ایبٹ آباد کے مقام پر ہلاک کر دیا تھا۔

اس سارے واقعے کی روداد پر مشتمل ایک کتاب بھی کچھ دن پہلے شائع کی گئی ہے۔

اسی طرح امریکی نیوز چینل فاکس نے ایک پاکستانی ڈاکٹر کا جیل سے کیا گیا انٹرویو چلایا جنہوں نے اسامہ کا پتا لگانے کے لیے ایک جعلی پولیو ویکسینیشن مہم چلائی تھی۔

اس انٹرویو میں ڈاکٹر شکیل آفریدی نے دعویٰ کیا ہے کہ انہیں اس بات کا علم نہیں تھا کہ وہ جس امریکی مہم کا حصہ ہیں وہ اسامہ بن لادن کا پتا لگانے کے لیے ہے۔

ڈاکٹر شکیل نے اپنی گرفتاری کے بعد دیے گئے سب سے پہلے انٹرویو میں فاکس نیوز کو بتایا کہ انہوں نے فرار ہونے کا سوچا تھا مگر اس سے پہلے ہی انہیں پاکستانی خفیہ ایجنسی نے اغوا کر لیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔