اخضر براہیمی شام کے پہلے دورے پر

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 14 ستمبر 2012 ,‭ 04:44 GMT 09:44 PST

اخضر براہیمی نے مشترکہ ایلچی کا عہدہ سنبھالتے وقت کہا تھا کہ شام میں امن قائم کرنا تقریباً ناممکن ہوگا

شام کے معاملے پر اقوام متحدہ اور عرب لیگ کے مشترکہ ایلچی اخضر براہیمی دمشق کے اپنے پہلے دورے پر ہیں جہاں انہوں نے شام کے وزیرِ خارجہ سے ملاقات کی۔ جمعے کے روز وہ صدر بشار الاسد اور حزبِ مخالف کی قیادت سے بھی ملیں گے۔

اخضر براہیمی کے ترجمان کا کہنا تھا کہ وزیرِ خارجہ ولید المعلم نے امن منصوبے کے لیے آئے ایلچی کو بتایا کہ وہ ان کے مشن کی کامیابی کے لیے پر عزم ہیں۔

شام میں صدر بشار الاسد کے خلاف مارچ دو ہزار گیارہ سے جاری تحریک میں ہزاروں لوگ ہلاک ہو چکے ہیں۔

دمشق پہنچنے پر امن ایلچی کا کہنا تھا کہ ’یہاں ایک بحران ہے، کسی کو بھی اس سے انکار نہیں۔۔۔ اور یہ ایسا بحران ہے جو بگڑتا جا رہا ہے اور کسی کو اس بات سے بھی انکار نہیں کہ خون خرابے کو روک کر امن کو بحال کرنا ہوگا‘۔

شام کے سرکاری میڈیا کے مطابق وزیرِ خارجہ نے اس ملاقات میں زور دیا کہ کسی بھی کوشش کا مقصد شامی عوام کے مفادات ہونا چاہیے۔

اخضر براہیمی شام میں ایران کے سفیر محمد رضا شیبانی سے بھی ملے۔ ایران صدر الاسد کی حکومت کا اہم حامی ہے۔

جمعرات کو حزبِ مخالف نے دعویٰ کیا کہ حکومتی افواج نے شام کے دوسرے بڑے شہر حلب پر جنگی طیاروں سے حملے کیے۔

حلب اور دمشق دونوں شہروں میں کشیدگی کی اطلاعات موصول ہو رہی ہیں۔

اخضربراہیمی نے مشترکہ ایلچی کا عہدہ سنبھالتے وقت کہا تھا کہ شام میں امن قائم کرنا تقریباً ناممکن ہوگا۔

انہوں نے یہ عہدہ اگست میں سابق ایلچی کوفی عنان کے امن منصوبہ کی ناکامی کے بعد سنبھالا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔