شام جنگی جرائم کے ملزموں کی فہرست

آخری وقت اشاعت:  منگل 18 ستمبر 2012 ,‭ 14:21 GMT 19:21 PST

شام میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کرنے والے اقوامِ متحدہ کے مبصر مشن نے شامی باشندوں اور گروپوں کی ایک خفیہ فہرست جاری کی ہے جو جنگی جرائم میں ملوث ہیں۔

مبصر مشن کے سربراہ پاؤلو سرجیو پنہیرو کا کہنا ہے کہ انہوں نے تشویشناک اور غیر معمولی شواہد اکھٹے کیے ہیں۔

انہوں نے اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل سے کہا ہےکہ وہ شام کے معاملے کو عالمی عدالتِ انصاف میں بھیجیں۔

اسی اثناء میں انسانی حقوق کی تنظیم ’ہیومن رائٹس واچ‘ نے کہا ہے کہ کہ مسلح باغی قیدیوں پر تشدد کر رہے ہیں اور انہیں اجتماعی سزائے موت دے رہے ہیں۔

تاہم تنظیم کا یہ بھی کہنا تھا کہ حکومتی فورسز کی جانب سے کیا جانے والا تشدد زیادہ وسیع ہے۔

شام میں تشدد پھیلنے کے بعد کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے اقوامِ متحدہ کا ایک خود مختار کمیشن گزشتہ برس قائم کیا گیا تھا۔

اگست میں کمیشن نے رپورٹ دی تھی کہ شام میں منظم طریقے سے تشدد کیاجا رہا ہے۔ شام میں حکومت نے قتل، زدو کوب، جنسی تشدد جیسے اقدامات کی اعلی ترین سطح سے اس کی اجازت دی رکھی ہے۔

کمیشن کے مطابق حزبِ اختلاف کی فورسز بھی جنگی جرائم کی مرتکب ہوئی ہیں۔ تاہم ان کی جرائم کی پیمانہ اور شدت اتنی نہیں جتنی کے حکومتی فورسز کی ہے۔

کمیشن کی رپورٹ کے مطابق مئی میں حولہ شہر میں ایک سو آٹھ افراد کی قتلِ عام میں حکومتی فورسز اور حکومت کی حامی ملیشیا شامل تھیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔