عراق: پرتشدد واقعات میں گیارہ ہلاکتیں

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 20 اکتوبر 2012 ,‭ 17:55 GMT 22:55 PST

عراق میں حالیہ دنوں پرتشدد واقعات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے

عراق میں حکام کے مطابق دھماکوں اور فائرنگ کے واقعات میں کم از کم گیارہ افراد ہلاک اور اڑتالیس زخمی ہو گئے ہیں۔

عراقی دارالحکومت بغداد میں شیعہ مسلمانوں کے مذہبی مقام پر دو بم دھماکوں میں سات ہلاکتیں ہوئیں۔

اس سے پہلے سنیچر کو بغداد ہی میں مسلح افراد کی فائرنگ سے دو پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے۔

بغداد میں فائرنگ کے ایک اور واقعے میں جیل کا ایک اہلکار ہلاک ہو گیا جبکہ موصل میں فائرنگ سے ایک فوجی مارا گیا۔

عراق میں اگرچہ سال دو ہزار چھ اور سات کے برعکس پرتشدد واقعات میں کمی آئی ہے تاہم امریکی افواج کے انخلاء کے بعد ایک بار پھر پرتشدد واقعات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

گزشتہ ماہ عراق میں پرتشدد واقعات میں 365 افراد ہلاک ہو گئے جو دو سال کے دوران ایک ماہ میں ہونے والی سب سے زیادہ ہلاکتیں تھیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ عراق میں القاعدہ کے شدت پسند فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانا چاہتے ہیں تاکہ شیعہ اکثریتی حکومت کو غیر مسحتکم کیا جا سکے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔