نیویارک:ٹرانسپورٹ کا نظام تاحال متاثر

آخری وقت اشاعت:  پير 5 نومبر 2012 ,‭ 09:42 GMT 14:42 PST
نیویارک کے ایک سب وے کی فوٹو

نیویارک میں حکام کا کہنا ہے کہ پیر کو دفتر جانے والے افراد سفر کرنے میں کو پریشانی کا سامنا رہے گا

امریکی ریاست نیویارک کے حکام نے خبردار کیا ہے کہ سینڈی طوفان کے باعث پیر کو بھی شہر کے ٹرانسپورٹ کا نظام متاثر رہے گا اور پیر کو دفتر جانے والے افراد کو سفر کرنے میں کو پریشانی کا سامنا رہے گا۔

ریاست کے گورنر انڈریو کومو نے کہا ہے کہ شہر کے ٹرانسپورٹ سروسز کی بحالی کا کام جاری ہے۔

وہیں نیو جرسی کی سرکاری ٹرانسپورٹ ایجنسی این جے ٹرانزٹ نے متنبہ کیا ہے کہ ٹرانسپورٹ سروسز کی مکمل بحالی میں ابھی اسے کچھ ہفتوں کا وقت لگے گا۔ اس کا یہ بھی کہنا ہے کہ نیویارک میں دفتر جانے والے عوام کی پریشانی کے حل کے لیے وہ بعض ایمرجنسی بسیں چلارہا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل نیویارک کے میئر اور گورنر نے خبر دار کیا تھا کہ سمندری طوفان سینڈی کے باعث بے گھر ہوجانے والے ہزاروں افراد کو آنے والے سرد موسم کے پیشِ نظر جلد از جلد مناسب رہائش گاہوں کی ضرورت ہے۔

نیویارک کے میئر مائیکل بلوم برگ کا کہنا ہے کہ تیس سے چالیس ہزار افراد کے لیے رہائش گاہیں مہیا کرنا ہوں گی۔

ریاست کے گورنر اینڈریو کومو کا کہنا ہے کہ ایندھن کی کمی کو پورا کیا جا رہا ہے۔

انتیس اکتوبر کو آنے والے سمندری طوفان کی وجہ سے امریکہ میں کم سے کم ایک سو چھ افراد ہلاک ہوئے ہیں، ان میں سے چالیس افراد کا تعلق نیویارک سے تھا۔

اتوار کو ریاست کے گورنر نے ایک اخباری کانفرنس میں بتایا کہ درجۂ حرارت گرنے کے بعد وہ تمام گھر جہاں حدّت کا نظام نہیں ہے، رہنے کے قابل نہیں ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’جو لوگ اب تک اپنے گھروں کو چھوڑنے سے انکاری ہیں، موسم سرد ہونے کے بعد ان کے پاس کوئی اور راستہ نہیں بچے گا۔‘

انہوں نے مزید بتایا کہ پیر کو دفاتر اور سکول کھلنے کے بعد پبلک ٹرانسپورٹ پر بھی خاصا دباؤ رہے گا۔

انہوں نے نیویارک کے عوام سے مطالبہ کیا کہ وہ ایندھن ذخیرہ نہ کریں اور کیونکہ مزید ایندھن کی ترسیل کی جا رہی ہے۔

اس سے پہلے امریکہ نے سینڈی طوفان سے پیدا ہونے والے صورتِ حال سے نمٹنے کے لیے بیرونی ممالک کے جہازوں کو امریکی بندرگاہوں پر آنے کی عارضی اجازت دے دی تھی۔

امريکي قانون جونز ايکٹ میں نرمي کا مقصد خليج ميکسيکو سے بحری جہازوں کو ريفائنري میں استعمال ہونے والا سازو سامان مشرقی ساحل کی ریاستوں میں لانے کي اجازت دينا ہے۔ بیرونی جہازوں کو امریکی ساحل تک آنے کی عارضی نرمی تیرہ نومبر تک جاری رہے گی۔

سينڈي طوفان کے گزر جانے کے پانچ روز بعد بھی نو لاکھ افراد کو بجلی کی فراہمی بحال نہیں کی جا سکی ہے۔

نیویارک کے گورنر اينڈريو کيومو نے سينڈي سے متاثر افراد سے کہا ہے کہ وہ ايندھن اور بجلي کي کمي کي وجہ سے صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں۔

گورنر نے کہا کہ ايندھن کي کمي کو پورا کرنے کے لیے اٹھائيس ملين ليٹر اضافی تيل نيويارک بھيجا جا رہا ہے۔

دوسری جانب نیو یارک شہر کے میئر مائیکل بلوم برگ نے لانگ آئی لینڈ پاور اتھارٹی کے بجلی کی بحالی کے لیے کیے جانے والے اقدامات کو ناکافی قرار دیا ہے۔

واضح رہے کہ لانگ آئی لینڈ اتھارٹی نیویارک شہر کے مضافات کو بجلی فراہم کرتی ہے۔

امریکہ کے محکمۂ توانائی کے مطابق سینڈی کی وجہ سے پیتیس لاکھ صارفین کو بجلی کے بحران کا سامنا کرنا پڑا۔ امدادی کارروائیوں کے باوجود اب تک پچیس لاکھ صارفین بجلی سے محروم ہیں۔

واضح رہے کہ سینڈی طوفان کی تباہی کا اثر منگل کو ہونے والے صدارتی انتخابات کے لیے ووٹنگ پر بھی ہوا ہے۔

انتخابی کمیشن نے فیصلہ کیا ہے کہ نیوجرسی ریاست میں طوفان کی وجہ سے بے گھر ہونے والے افراد فیکس یا ای میل کے ذریعے اپنے ووٹ ڈال سکیں گے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔