غیر موزوں ای میل، جنرل ایلن بھی زیرِ تفتیش

آخری وقت اشاعت:  منگل 13 نومبر 2012 ,‭ 08:21 GMT 13:21 PST

جنرل ڈیوڈ پیٹراس کے جنسی سکینڈل نے افغانستان میں امریکی کمانڈر جنرل جان ایلن کو بھی نرغے میں لے لیا

امریکہ کے خفیہ ادارے سی آئی آے کے مستعفی سربراہ جنرل ڈیوڈ پیٹریئس کا ایک خاتون کے ساتھ غیر ازدواجی مراسم کے سکینڈل نے افغانستان میں امریکہ کے فوجی کمانڈر جنرل جان ایلن کو بھی زد میں لے لیا ہے۔

امریکی محکمہ دفاع کے اہل کاروں کا کہنا ہے کہ پینٹاگان افغانستان میں امریکی کمانڈر جنرل جان ایلن کے جنرل پیٹریئس کے ساتھ منسلک ایک خاتون کو غیر موزوں ای میل بھجنے کی تحقیقات کر رہی ہے۔

امریکہ کے وزیر دفاع لیون پنیٹا کا کہنا ہے کہ ایف بی آئی نے پینٹاگان کو اس معاملے کے بارے میں اتوار کو آگاہ کیا۔

جنرل ایلن جو کسی بھی غلط حرکت کا مرتکب ہونے سے انکار کرتے ہیں اپنے عہدے پر کام جاری رکھیں گے۔

اس سے پہلے جنرل پیٹریئس غیر ازدواجی مراسم رکھنے کو قبول کرتے ہوئے اپنے عہدے سے جمعہ کو مستعفی ہو گئے تھے۔

لیون پنیٹا نے صحافیوں کو بتایا کہ انھوں نے جنرل ایلن کو یورپ میں نیٹو کے سپریم کمانڈر کے عہدے پر نامزد کرنے کو عارضی طور پر روکنے کی تجویز دی جسے صدر براک اوباما نے منظور کی۔

پنیٹا نے مزید بتایا کہ انھوں نے پیر کو پینٹاگون کو جنرل ایلن کے خلاف تحقیقات کرنے کا حکم دیا اور امریکی سینیٹ کی فوجی خدمات کی کمیٹی کو افغانستان میں جنرل ایلن کی جگہ جنرل جوزف ڈنفرڈ کی جلد نامزدگی کی درخواست کی۔

جنرل جان ایلن کو یورپ میں نیٹو کے سپریم کمانڈر کی حیثیت سے نامزدگی کے حوالے سے جمعرات کو سینیٹ کے سامنے پیش ہونا تھا۔

پنیٹا نے جنرل ایلن کی افغانستان میں خدمات کو سراہتے ہوئے کہا کہ انھوں نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق جنرل ایلن نے فلوریڈا کی رہائشی شادی شدہ خاتون جل کیلی کو ای میل لکھی تھی۔ خاتون پہلے سے جنرل پیٹریئس کے سکینڈل میں شریک تفتیش ہیں کیوں کہ انہوں نے ایف بی آئی کو بتایا تھا کہ ان کو دھمکی آمیز ای میلز بھیجی گئی تھیں۔

کہا جاتا ہے کہ جل کیلی کو جنرل پیٹریئس کے ساتھ غیر ازدواجی رشتے میں منسوب پولا براڈویل کی طرف سے دھمکی آمیز ای میل بھیجے گئے تھے۔

پینٹاگان کے ایک سینئر اہلکار کے مطابق جنرل ایلن اور جل کیلی کے درمیان 2010 سے 2012 تک ہونے والے رابطوں کے حوالے سے تیس ہزار صفحات پر مشتمل ای میل اور دوسرے دستاویزات کی جانج پڑتال کی جا رہی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔