ڈرون پالیسی کی نگرانی کا اختیار پارلیمان کو: لندن ہائی کورٹ

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 21 دسمبر 2012 ,‭ 13:37 GMT 18:37 PST

برطانوی ہائی کورٹ نے ایک پاکستان شخص کی جانب سے ڈرون حملوں میں برطانیہ کے ممکنہ کردار سے متعلق درخواست کو مسترد کر دیا ہے۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ وہ حکومت کو اپنی پالیسی کا انکشاف کرنے پر مجبور نہیں کر سکتی۔

پاکستانی شہری نور خان نے برطانیہ کی ہائی کورٹ میں ایک درخواست دائر کر رکھی تھی جس میں عدالت سے استدعا کی گئی تھی کہ وہ حکومت کو حکم دے کہ وہ ڈرون حملوں میں امریکہ سے اپنے تعاون کو واضح کرے۔

پاکستان کے قبائلی علاقے سے تعلق رکھنے والے نور خان کے والد ایک ڈرون حملے میں ہلاک ہوگئے تھے۔ان کا موقف ہے کہ ان کے والد ایک جرگے میں شریک تھے جب وہاں ڈرون حملہ ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ان کے والد کا القاعدہ سے کوئی تعلق نہیں تھا۔

برطانوی حکومت ڈرون حملوں میں امریکہ کی مدد کی نہ تو تصدیق کرتی ہے اور نہ ہی تردید کرتی ہے۔

ہائی کورٹ کے جسٹس لارڈ موزز نے اپنے فیصلے میں قرار دیا کہ وہ حکومت کو اپنی پالیسی منکشف کرنے کا حکم نہیں دے سکتے اور حکومت کے خفیہ معاہدوں کی نگرانی پارلیمنٹ کے دائرہ اختیار میں آتی ہے۔

برطانیہ بھی افغانستان میں بغیر پائلٹ کے ڈرون طیاروں کا استعمال کرتا ہے لیکن درخواست میں جن ڈرون آپریشنوں کا ذکر کیاگیا ہے ان میں برطانیہ شریک نہیں تھا۔

درخواست گزار نور خان کے وکلاء نے برطانوی ہائی کورٹ کے سامنے موقف اختیار کیا تھا کہ خفیہ مواصلات کا برطانوی مرکز ( جی سی ایچ کیو) امریکی سی آئی اے کو ایسی معلومات فراہم کر سکتا ہے جس سے مدد لے کر وہ ڈرون حملے کرتا ہو۔

نور خان کے وکلاء نے برطانوی عدالت سے ڈرون حملوں کو غیر قانونی قرار دینے کی استدعا نہیں کی تھی۔ وکلاء نے البتہ عدالت میں موقف اختیار کیا تھا کہ اگر برطانیہ ان حملوں میں مدد کر رہا ہے تو وہ جنگی جرائم اور قتل کا مرتکب ہو سکتا ہے۔

حکومتی وکلاء نے عدالت کو بتایا کہ وہ پالیسی کے حوالے سے حکومت کو حکم جاری نہیں کر سکتی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔