’طالبان کی سیاست، پاکستان کا کردار اہم‘

آخری وقت اشاعت:  پير 24 دسمبر 2012 ,‭ 08:09 GMT 13:09 PST

طالبان کی سیاسی تحریک کے مستقبل کے سلسلے میں بھی پاکستان کے کردار کو انتہائی اہم قرار دیا جا رہا ہے

افغانستان میں طالبان کی شدت پسند تحریک کو سیاسی رخ دینے کے لیے پاکستان کے کردار کو انتہائی اہم قرار دیا جا رہا ہے اور حکومت پاکستان اور افغانستان کے اعلیٰ اہلکار حالیہ پیرس بات چیت کے بعد پرامید ہیں کہ اس سے طالبان کو بالآخر افغان سیاسی دھارے میں لانے میں مدد ملے گی۔

اسلام آباد میں تعینات افغان سفارت کار اور پاکستانی اہلکار ٹھوس نتائج سے عاری پیرس مذاکرات سے کسی بڑی پیش رفت کی امید نہیں کر رہے تھے لیکن ان کا کہنا ہے کہ بات چیت میں طالبان کی شرکت اور اپنا موقف واضح کرنے کو ہی ایک سیاسی تحریک کی تشکیل کی جانب پہلا قدم قرار دیا جا سکتا ہے۔

اس سلسلے میں طالبان نمائندوں مولوی شہاب الدین دلاور اور ڈاکٹر محمد نعیم کی پیرس میں تقاریر کی جانب توجہ دلائی جاتی ہے اور تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ طالبان نمائندوں کے طویل بیانات میں کہیں بھی جنگ کی بات نہیں کی گئی بلکہ سیاسی طریقے سے آئینی و انتظامی امور میں تبدیلی سے متعلق تجاویز دی گئی ہیں۔

ایک اعلیٰ افغان اہلکار کا کہنا ہے کہ پیرس بات چیت سے قیامِ امن کے لیے جاری کوششوں کو تقویت ملی ہے۔’یہ ایک مثبت پیش رفت ہے۔‘

طالبان کی سیاسی تحریک کے مستقبل کے سلسلے میں بھی پاکستان کے کردار کو انتہائی اہم قرار دیا جا رہا ہے۔ اعلیٰ افغان اہلکار کا کہنا ہے کہ ’ہم پاکستان کی مصالحتی کوششوں میں مدد کی تعریف کرتے ہیں اور پرامید ہیں کہ دونوں ممالک مل کر اس مسئلے کا حل تلاش کرسکتے ہیں۔‘

افغان سفارتی حلقوں کے مطابق پاکستان کے ساتھ اس بارے میں جامع بات چیت کی ضرورت ہے۔ ’ہم سمجھتے ہیں کہ پاکستان کے ساتھ اختلافی امور کو ابھی نہ چھیڑتے ہوئے ان امور پر بات آگے بڑھا سکتے ہیں جن پر دونوں ممالک کا اتفاق ہے یا مشترکہ فائدہ ہے۔ اختلافی امور پر بعد میں جب حالات سازگار ہوں گے تب بات کریں گے۔‘

اس بابت پاکستان کی جانب سے حالیہ دنوں میں دو مواقع پر طالبان قیدیوں کی رہائی کو بھی اہم سمجھا جا رہا ہے۔ سفارتی حلقوں کے مطابق پاکستان کے پاس اب بھی لگ بھگ سو طالبان قیدی ہیں جنہیں کالعدم تحریک پر دباؤ اور اپنی مرضی کی باتیں منوانے کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔

ان بدلتے حالات میں حقانی نیٹ ورک کا ذکر اب کم سے کم دیکھا جا رہا ہے جس کی ایک وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے کہ یہ نیٹ روک بھی افغان حکومت اور طالبان کی قیادت میں رابطوں کے نتائج کا منتظر ہو۔

بظاہر اب جب مذاکرات کی روش چل پڑی ہے تو ایک سوچے سمجھے منصوبے کے مطابق نہ تو امریکی اور نہ ہی افغان حکام پاکستان سے حقانی نیٹ ورک کے خلاف کارروائی کا کوئی تازہ مطالبہ کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔