عراق بم دھماکوں میں بائیس افراد ہلاک

آخری وقت اشاعت:  پير 31 دسمبر 2012 ,‭ 16:08 GMT 21:08 PST

عراق میں بم دھماکوں کے نتیجے میں کم از کم بائیس افراد ہلاک ہو گئے ہیں

عراق میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے مختلف حصوں میں ہونے والے بم دھماکوں کے نتیجے میں کم از کم بائیس افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ جبکہ ان بم دھماکوں میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

مہلک ترین بم دھماکہ عراق کے دارالحکومت بغداد کے جنوب میں واقع قصبے مسیب ہوا۔ جس میں سات افراد ہلاک ہو گئے۔

جنوبی شہر حلہ کے مصروف بازار میں بم دھماکے میں دو افراد مارے گئے۔

سال دو ہزار چھ اور دو ہزار سات کے بعد عراق میں پرُتشدد واقعات میں کمی تو آئی ہے لیکن باغیوں کی جانب سے مختلف علاقوں میں حملے معمول کی بات ہے۔ شمالی شہرکرکوک میں بھی تسلسل کے ساتھ کئی دھماکے ہوئے اور ایک دھماکہ اس وقت ہوا جب سکیورٹی فورسز کے اہلکار راکٹ کو ناکارہ بنا رہے تھے۔ اس دھماکے میں دو پولیس اہلکار ہلاک جبکہ چار افراد زخمی ہوئے۔کرکوک کا علاقہ حکومت اور کرد اقلیت کے مابین تنازعے کا باعث ہے۔

مشرقی صوبے دیالا میں شیعہ مسلک کے افراد کے جلوس پر حملہ ہوا جس میں دس افراد کے زخمی ہونے کے اطلاعات ہیں۔عراق میں ہونے والے حالیہ دھماکے ایک ایسے وقت پر ہوئے ہیں جو شیعہ مسلک کے افراد کے لیے مذہبی لحاظ سے انتہائی اہمیت کے حامل ہیں۔

عراق میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والے افراد اکثر سنی تشدد پسندوں کے ہاتھوں نشانہ بن رہے ہیں۔ عراق میں حکومت کو کئی بحرانوں کا سامنا ہے جس میں جنوبی علاقوں میں احتجاجی مظاہرے، حکومت اور کُردوں کے مابین شمالی علاقوں میں تیل اور زمین کا تنازعات شامل ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔