آسٹریلیا سے امریکا تک نئے سال کا جشن

آخری وقت اشاعت:  منگل 1 جنوری 2013 ,‭ 03:30 GMT 08:30 PST

دنیا میں نئے عیسوی سال دو ہزار تیرہ کے آغاز پر تقریبات کا سلسلہ جاری ہے اور متعدد شہروں میں آتش بازی کے شاندار مظاہروں کے ساتھ نئے سال کا استقبال کیا گیا ہے۔

ہمیشہ کی طرح سال نو کی تقریبات کا آغاز سب سے پہلے نیوزی لینڈ کے شہر آکلینڈ سے ہوا۔

آکلینڈ کے سکائی ٹاور سے نئے سال کی خوشی میں آتش بازی کئی۔ اس کے دو گھنٹے بعد آسٹریلیا کے شہر سڈنی کے مشہور ہاربر برج پر رات کے بارہ بنجتے ہی آتش بازی کا شاندار مظاہرہ ہوا جسے دیکھنے کے لیے پندرہ لاکھ افراد موجود تھے۔

برما میں بھی کئی عشروں بعد پہلی بار نئے سال کی تقریبات کھلے عام منعقد ہوئی ہیں۔ اس سے پہلے فوجی حکمرانوں نے ملک میں سال نو کی عام تقریبات پر پابندی عائد کر رکھی تھی۔

شمالی کوریا میں بھی آتش بازی کا شاندار مظاہرہ ہوا جبکہ جنوبی کوریا میں نئے سال کا آغاز دارالحکومت سیول میں پندرہویں صدی کی روایتی گھنٹی تینتیس مرتبہ بجا کر کیا گیا۔

اس کے علاوہ چین کے شہروں بیجنگ اور شنگھائی کے علاوہ ہانگ کانگ میں بھی آتش بازی کے شاندار مظاہرے کیے گئے ہیں۔

لندن میں دریائے ٹیمز کے کنارے نئے سال کا استقبال کرنے کے لیے لاکھوں افراد جمع ہوئے اور انہوں نے لندن آئی پر ہونے والی آتش بازی کو دیکھا۔ برطانوی گرجا گھروں میں نئے سال کے موقع پر خصوصی دعائیہ تقریبات کا اہتمام کیا گیا ہے۔

امریکی شہر نیویارک کے ٹائمز سکوائر میں بھی عوام کی ایک بہت بڑی تعداد خوشیاں منانے کے لیے جمع ہوئی جبکہ برازیل کے دارالحکومت ریو ڈی جنیرو کے کوپا کبانا ساحل پر 2013 کے استقبال کے لیے بیس لاکھ افراد کے جمع ہونے کی توقع کی جا رہی ہے۔

ادھر بھارت جہاں ایک نوجوان عورت کی ریپ کے بعد ہلاکت کے بعد ماحول سوگوار ہے اور سال نو کی بیشتر تقریبات کو منسوخ کر دیا گیا۔ پنجاب اور ہریانہ کی ریاستی حکومتوں اور بھارتی فوج نے نئے سال کی تقریبات نہ منانے کا فیصلہ کیا ہے۔

لاطینی امریکہ کے ملک وینزویلا میں صدر ہیوگو شاویز کی طبعیت کی ناسازی کی اطلاعات پر نئے سال کی تقریبات منسوخ کر دی گئیں۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔