صدر مرسی کی ’تضحیک‘ ، تحقیقات شروع

آخری وقت اشاعت:  بدھ 2 جنوری 2013 ,‭ 02:03 GMT 07:03 PST

مصر کے پراسیکوٹر نے ملک کے ایک معروف سیاسی طنز نگار باسم یوسف کے خلاف باضابطہ تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ باسم یوسف پر الزام ہے کہ انہوں نے ایک ٹی وی شو میں صدر محمد مرسی کا تمسخر اڑایا ہے اور عوام کی نظروں میں ان کی قدر کو کم کرنے کی کوشش کی ہے۔

باسم یوسف پیشے سے ڈاکٹر ہیں لیکن صدر حسنی مبارک کے خلاف احتجاجی تحریک میں بھر پور شریک رہے ۔ صدر حسنی کی اقتدار سے علیحدگی کے بعد باسم بوسف ایک سیاسی طنز نگار کے طور پر ابھرے ہیں۔ باسم یوسف کے ٹی وی شو مصر میں انتہائی مقبول ہیں۔

احتجاجی تحریک کےدوران باسم یوسف ویڈیو تیار کر کے انٹرنیٹ پر ڈالتے تھے لیکن صدر حسنی مبارک کے اقتدار سے علیحدگی کے بعد ملک کے مختلف ٹی وی چینلوں پر ان کے ہفتہ وار تین پروگرام نشر ہوتے ہیں جن کو پسند کرنے والوں کی ایک بڑی تعداد ہے۔

باسم یوسف کے علاوہ ایک روزنامہ ’المصر الیوم‘ کی انتظامیہ نے الزام عائد کیا ہے کہ حکومت نے ان سے شکایت کی ہے کہ وہ صدر مرسی کے بارے میں جھوٹی خبریں‘ نشر کر رہے ہیں۔

مصری حزب اختلاف کا موقف ہے کہ اخوان المسلیمن سے تعلق رکھنے والے محمد مرسی مصر کو ایک بار پھر آمریت کی طرف لے کر جا رہے ہیں اور وہ آزاد پریس کو برداشت نہیں کر پا رہے۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔