مالی میں فرانسیسی افواج کی کارروائی مختصر ہوگی

آخری وقت اشاعت:  پير 14 جنوری 2013 ,‭ 05:18 GMT 10:18 PST
رفالے طیارہ

رفالے طیارے سے فرانس نے مالی کے باغیوں کے ٹھکانے پر حملہ کیا ہے۔

پیرس میں فرانس کے حکام نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ فرانس کے جنگی طیاروں نے افریقی ملک مالی کے مشرقی شہر گاو پر بمباری کی ہے۔

واضح رہے کہ شہر گاو باغیوں کے قبضے میں ہے۔

مالی میں جمعہ کو فرانس کی فوج مسلم شدت پسندوں کے خلاف حرکت میں آئی تاکہ وہ وہاں کی حکومت کو مرکزی شہر کونا کو دوبارہ حاصل کرنے میں مدد فراہم کر سکے۔

گاو کے ایک باشندے نے خبررساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ شہر میں اسلام پسندوں کے ٹھکانے تباہ کر دیے گئے ہیں اور جنگجو فرار ہوگئے ہیں۔

انصار داعین اسلامی گروپ کے ایک ترجمان کے بقول فرانسیسی حملے کونا ، دوئنتزا اور لیرے کے تین علاقوں میں ہوئے ہیں۔

جمعہ کو فرانسیسی حملے کے بعد سے تقریبا گیارہ مالی فوجی اور فرانس کے ایک فوجی ہیلی کاپٹر کے پائلٹ کے مارے جانے کی خبر ہے۔

بین الاقوامی ادارے ہیومن رائٹس واچ کا کہنا ہے کہ کونا میں دس شہری مارے گئے ہیں جن میں تین بچے بھی شامل ہیں۔

فرانس نے کہا ہے کہ بمباری کے بعد باغیوں کو کافی جانی نقصان اٹھانا پڑا ہے جبکہ مالی فوج کے ایک اہل کار کا کہنا ہے کہ ان کے مطابق سو سے زیادہ جنگجو مارے گئے ہیں

اس سے قبل پیرس میں فرانسیسی ایوان صدر کے ایک افسر نے ان باغیوں کے بارے میں کہا تھا کہ وہ ’بہتر تربیت یافتہ‘ اور ’بہتر اسلحے‘ سے لیس ہیں۔

"گزشتہ رات فضائی حملے ہوئے تھے، ابھی بھی ہو رہے ہیں آج بھی ہونگے اور کل بھی"

فرانسیسی وزیر دفاع

گاؤ شہر مالی حکومت کے زیر اقتدار کنٹرول لائن سے پانچ سو کلو میٹر کے فاصلے پر ہے۔

واضح رہے کہ ملک کے شمالی حصے میں باغیوں کی حکومت ہے جبکہ مالی کی حکومت کا جنوبی علاقے میں کنٹرول ہے۔

فرانس کی وزارت دفاع نے پیرس میں کہا ہے کہ چار رفائیل لڑاکا طیارے فرانس میں اپنے ملٹری بیس سے پرواز کرتے ہوئے گئے اور باغیوں کے تربیتی مراکز اور اسلحوں کے ڈپو کو نشانہ بنایا۔

اسلام پسند باغیوں کی حربی طاقت پر حیرت کا اظہار کرتے ہوئے صدارتی ترجمان نے کہا کہ لیبیا کی جنگ کے بعد سے انھیں جدیدترین اسلحے تک رسائی ہے۔

اس سے قبل وزیر دفاع ژاں ویس لا دریاں نے کہا کہ باغیوں کو پسپا کرنے کے لیے حملے جاری ہیں کیونکہ ملک کے زیادہ تر شمالی علاقوں پر ابھی تک ان کا قبضہ ہے۔ انھوں نے کہا ’گزشتہ رات فضائی حملے ہوئے تھے، ابھی بھی ہو رہے ہیں آج بھی ہونگے اور کل بھی۔‘

فرانس کے ان حملوں پر بہت سے لوگوں کو حیرت ہے کیونکہ اقوام متحدہ کی حمایت والی کسی بین الاقوامی فوج سے یہ امید نہیں تھی کہ وہ کسی مغربی افریقی ملک میں گرمی تک کوئی فوج تعینات کرے گی۔

لیکن گزشتہ ہفتے اسلام پسند باغیوں نے جنوب میں مزید علاقوں پر قبضہ کر لیا اور اہم سٹریٹیجک شہر کونا پر قابض ہو گئے تھے بہرحال اب شہر کو ان سے آزاد کرالیا گیا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔