سعودی عرب:مصری قانون داں کو کوڑوں کی سزا

آخری وقت اشاعت:  منگل 15 جنوری 2013 ,‭ 18:26 GMT 23:26 PST

فائل فوٹو

سعودی عرب کی ایک عدالت نے مصر میں انسانی حقوق کے کے لیے کام کرنے والے ایک قانون داں کو تین سو کوڑوں اور پانچ برس جیل کی سزا سنائی ہے۔

مصری قانون داں احمد ال گیزاوی پر جدہ کی ایک عدالت میں ممنوعہ دوا لانے کے الزام پر مقدمہ چلایا گیا تھا۔

احمد ال گیزاوی کو اپریل میں سعودی عرب میں ممنوع اعصابی سکون آور بیس ہزار گولیوں کے ساتھ حراست میں لیا گیا تھا۔

اس مقدمے پر دونوں ملکوں کے درمیان سفارتی تنازع شروع ہوگیا تھا۔

مصر نے ان کی حراست پر سخت احتجاج کیا تھا جس کے جواب میں سعودی عرب نے اپنا سفیر مصر سے واپس بلا لیا تھا۔

اس سے پہلے مصر اور اسرائیل کے درمیان ہونے والے معاہدے کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات انتہائی کشیدہ ہوگئے تھے جس کے بعد سفارتی روابط کہیں دس برس بعد 1987 میں بحال ہوئے تھے۔

جس کے بعد دونوں کے درمیان اچھے سفارتی تعلقات قائم تھے۔

اُس کے بعد سے یہ دوسرا موقع تھا، جو دنوں ملکوں میں ملکی سطح پر کشیدگی کا باعث بنا ہے۔

اسی قسم کے ایک اور کیس میں ایک دوسرے مصری شخص کو چار برس جیل اور چار سو کوڑوں کی سزا دی گئی تھی۔

اے ایف پی کے مطابق ایسے ہی ایک کیس میں سعودی شہری کو دو برس جیل اور سو کوڑوں کی سزا سنائی گئی۔

مصری کے انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ مقدمے کی وجہ ممنوعہ دوا نہیں ہے بلکہ احمد ال گیزاوی نے سعودی جیلوں میں مصری قیدیوں کے ساتھ ہونے والے سلوک پر شکایت درج کرائی تھی۔ جس کے بعد انہیں اس کیس میں پھنسایا گیا ہے۔

ان کے اہل خاندان کا کہنا ہے کہ وہ عمرے کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب گئے تھے، مگر سعودی حکام کہتے ہیں کہ جب جدہ ائر پورٹ پر اس دوا کے ساتھ انھیں گرفتار کیا گیا تھا تو وہ احرام میں نہیں تھے۔یہ دوا اُس وقت ان کے سامان میں سے ملی تھی۔

جج کا یہ بھی کہنا ہے کہ احمد ال گیزاوی کے اچھے چال چلن کے وجہ سے اُن کے ساتھ نرمی برتی گئی اور کم سزا سنائی گئی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔