اسرائیل شام کو غیر مستحکم کر رہا ہے: اسد

آخری وقت اشاعت:  اتوار 3 فروری 2013 ,‭ 13:34 GMT 18:34 PST

دمشق کے شمال مشرق میں جمرایہ کے علاقے میں واقع اس تحقیقی مرکز پر بمباری کے نتیجے میں شامی حکام کے مطابق دو افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہو گئے تھے

شام کے صدر بشار الاسد نے اسرائیل پر شام کو غیر مستحکم کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔

اسرائیل کی جانب سے بدھ کے روز شام کے ایک تحقیقی مرکز پر فضائی حملے کے بعد یہ پہلی بار ہے کہ شامی صدر نے اس سلسلے میں بات کی ہے۔

دمشق میں ایک ایرانی وفد سے ملاقات کے دوران انہوں نے کہا کہ شام ہر طرح کے موجودہ خطرات اور جارحیت سے نمٹنے کے لیے تیار ہے۔

شامی ٹی وی نے اس تحقیقی مرکز پر حملے کے بعد کی تباہی کی فلم چلائی جس پر اسرائیلی فضائیہ نے حملہ کیا تھا۔

اسرائیل نے اس حملے کے بارے میں سرکاری طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے لیکن وزیرِ دفاع نے اتوار کو اس بات کا عندیہ دیا کہ اس حملے کے پیچھے اسرائیل ہے۔

انہوں نے اعلیٰ سطح کے عالمی سفارت کاروں اور دفاعی حکام کے ایک اجلاس کو بتایا کہ ’حملہ اس بات کا ثبوت ہے کہ ہم جو کہتے ہیں وہ کرتے ہیں‘۔

شام کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فضائیہ کے لڑاکا طیاروں نے دمشق کے شمال مشرق میں جمرایہ کے علاقے میں واقع اس کے ایک تحقیقی مرکز پر بمباری کی جس کے نتیجے میں دو افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہو گئے تھے۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ لبنان جانے والے ہتھیاروں سے لدے ٹرکوں کو اس حملے میں نشانہ بنایا گیا تھا اور یہ روسی ساخت کے ایس اے سترہ میزائل تھے اور خیال ہے کہ اس قافلے کی منزل لبنان میں شدت پسندگروپ حزب اللہ کے ٹھکانے تھے۔

وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے نائب مشیر بین رہوڈز نے اسرائیل کی جانب سے حملے کی تصدیق نہیں کی تھی لیکن انہوں نے شام کو متنبہ کیا تھا کہ شام حزب اللہ کو ہتھیار نہ بھیجے۔

انہوں نے کہا تھا کہ ’شام حزب اللہ کو ہتھیار بھیج کر خطے کو مزید غیر مستحکم نہ کرے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔