ڈھاکہ: کشتی کا حادثہ، ’پچاس مسافر لاپتہ‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 فروری 2013 ,‭ 06:05 GMT 11:05 PST

بنگلہ دیش میں کشتیاں نقل و حمل کا ایک اہم ذریعہ ہیں

بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ کے نزدیک ایک کشتی ڈوبنے سے کم از کم پچاس مسافر لاپتہ ہوگئے ہیں۔

دریائے میگھنا میں ڈوبنے والی ایم وی سروش نامی اس کشتی پر سو کے قریب مسافر سوار تھے۔

ضلعی منتظم سیف اللہ بادل نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ پچیس افراد تیر کر ساحل تک پہنچنے میں کامیاب رہے جبکہ درجنوں افراد کو امدادی کوششوں کے نتیجے میں بچا لیا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ اب بھی پچاس افراد لاپتہ ہیں۔

اطلاعات کے مطابق ڈوبنے والی کشتی دارالحکومت ڈھاکہ سے ضلع چاندپور جا رہی تھی اور اسے ضلع منشی گنج میں حادثہ پیش آیا۔

مقامی ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ کشتی ایک اور کشتی سے ٹکرانے کی وجہ سے ڈوبی۔

گزشتہ برس مارچ میں اسی دریائے میگھنا میں ہی ایک کشتی اور تیل لے جانے والے ٹینکر کے درمیان تصادم کے نتیجے میں ایک سو بارہ سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔

بنگلہ دیش میں کشتیوں کے حادثات عام ہیں اور ہر سال ایسے حادثوں میں لوگوں کی بڑی تعداد ہلاک ہو جاتی ہے۔

ایسے حادثات کے لیے گنجائش سے زائد مسافروں کی سواری کو موردِ الزام ٹھہرایا جاتا ہے۔

.

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔