چین نے جاپانی الزام مسترد کر دیا

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 فروری 2013 ,‭ 11:08 GMT 16:08 PST

چین کا جنگی جہاز جس نے مبینہ طور پر اپنا فائر کنٹرول ریڈار جاپانی جہاز کی سمت کر دیا تھا

چین کی وزارتِ دفاع نے جاپان کا یہ الزام مسترد کر دیا ہے کہ اس کے بحری جہازوں نے گذشتہ ماہ دو بار جاپانی جنگی جہازوں پر اپنے ریڈار تانے تھے۔

وزارتِ دفاع کی ویب سائٹ پر جاری کردہ ایک بیان کے مطابق جاپان کا یہ بیان ’حقائق کے منافی‘ ہے۔ اس میں مزید کہا گیا ہے کہ دونوں مواقع پر چین نے اپنا فائر کنٹرول ریڈار استعمال نہیں کیا۔

بیان میں جاپان سے کہا گیا ہے کہ وہ ’مشرقی بحیرۂ چین میں کشیدگی میں اضافہ کرنے سے گریز کرے۔‘

جاپان نے کہا ہے کہ چینی توجیہہ حقائق پر مبنی نہیں ہے۔

دونوں ممالک مشرقی بحیرۂ چین میں دو جزائر کی ملکیت پر ایک تلخ تنازعے میں الجھے ہوئے ہیں۔ جزائر پر جاپان کا قبضہ ہے، جب کہ ان پر تائیوان بھی دعویٰ کرتا ہے۔ ان جزائر کو جاپان میں سینکاکو، جب کہ چین میں دیاویو کہا جاتا ہے۔

ستمبر 2012 میں اس وقت کشیدگی میں اضافہ ہو گیا تھا جب چینی بحری جہازوں نے ان سمندری پانیوں میں آنا جانا شروع کر دیا جن کے بارے میں جاپان کا کہنا ہے کہ وہ جزائر کے گرد اس کی سمندری حدود کے اندر واقع ہیں۔ اس کے بعد جاپانی حکومت نے چین کو تنبیہ کی تھی۔

اس ہفتے کے اوائل میں جاپان کے وزیرِ دفاع اتسونوری اونودیرا نے کہا تھا کہ 30 جنوری کو ایک چینی جنگی جہاز نے جزائر کے قریب پہنچ کر اپنا اسلحے والا ریڈار جاپانی بحری جہاز پر تان دیا تھا۔

"چینی جہاز معمول کے مشاہدے اور تیاری کی حالت میں رہا، اور اس نے اپنا ریڈار استعمال نہیں کیا۔"

چینی وزارتِ دفاع

انھوں نے کہا کہ 19 جنوری کو بھی ایک اور چینی جنگی جہاز نے ایک جاپانی فوجی ہیلی کاپٹر کو اسی قسم کے ریڈار سے نشانہ بنایا تھا۔

چینی وزارتِ دفاع نے اپنے بیان میں کہا کہ ہر دو واقعات میں چینی جہاز’معمول کے مشاہدے اور تیاری کی حالت میں رہا، اور اس نے اپنا ریڈار استعمال نہیں کیا۔‘

’چین کو امید ہے کہ جاپان مشرقی بحیرۂ چین میں کشیدگی میں اضافہ نہ کرنے کے لیے موثر اقدامات کرے گا اور ذمے دارانہ بیانات دے گا۔‘

جاپان کے وزیرِ دفاع نے اس تردید کو مسترد کر دیا۔ انھوں نے کہا کہ چین کی وضاحت حقائق کے ساتھ میل نہیں کھاتی اور کلی طور پر ناقابلِ قبول ہے، اور میں نے انھیں یہ بات بتا دی ہے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔