’مظاہرین کے خلاف سفید فاسفورس استعمال کیا گیا‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 15 فروری 2013 ,‭ 23:02 GMT 04:02 PST

اس رپورٹ کو عینی شاہدین، تصاویر اور گرنیڈ کے خول کے فارنزک تجزیہ کی بنیاد پر تیار کیا گیا ہے

ایک نئی رپورٹ کے مطابق برما کی پولیس نے ایک متنازع تانبے کے کان سے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے فوج کی طرف سے دیے گئے سفید فاسفورس کے گرنیڈ استعمال کیے۔

مہینوں سے جاری مظاہروں کو ختم کرنے کے لیے گزشتہ نومبر میں حکومت کی کارروائی میں درجنوں افراد زخمی ہوئے تھے جس میں زیادہ تر بدھ بھِکشو شامل تھے۔

یہ رپورٹ برما کے وکیلوں اور امریکہ میں جسٹس ٹرسٹ نے تیار کی ہے۔

اس رپورٹ کو عینی شاہدین، تصاویر اور گرنیڈ کے خول کے فارنزک تجزیہ کی بنیاد پر تیار کیا گیا ہے۔

اکتالیس صفحات پر مشتمل اس رپورٹ کے مطابق 29 نومبر کو برما کی پولیس نے کئی بار ہوا میں اور مظاہرین کے خیموں میں سفید فاسفورس کے گرنیڈ فائر کیے۔

رپورٹ میں عینی شاہدین کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ انہوں نے آسمان میں چمکدار شعلے دیکھے اور چپکنے والے شعلوں سے خیمے ، کپڑے اور جلد گئے۔

سفید فاسفورس بہت ہی متنازع ہے جسے میدانِ جنگ میں استعمال کیا جاتا ہے جس طرح کہ اسے عراق کے شہر فلوجہ میں استعمال کیا گیا تھا۔

جسٹس ٹرسٹ کے ڈائریکٹر راجر نورماند نے رنگون میں اس رپورٹ کی رونمائی کے موقع پر کہا کہ’ یہ بات پہلے کبھی نہیں سنی گئی کہ پولیس پْر امن مظاہرین کو کنٹرول کرنے کے لیے آتشی گولہ بارود کا استعمال کرے۔‘

اس رپورٹ کے مصنفین نے مظاہرین کے خلاف استعمال کی گئے گرنیڈ کے ایک خول کا لیباٹری میں ٹیسٹ کیا جس پتہ چلا کہ گرنیڈ سفید فاسفورس کے تھے۔

رپورٹ کی تحقیقات میں تصویروں اور عینی شاہدین کے بیانات سے مدد لی گئی ہے۔ اس واقع میں زخمی ہونے والوں کے جسم شدید جلے ہوئے تھے۔

رپورٹ میں مظاہرین کی ناارضگی اور شکایات کا بھی جائزہ لیا گیا ہے۔

مظاہرین نے الزام لگایا کہ حکام نے ان کی زمینوں پر قبضہ کرنے کے لیے جھوٹ بولا اور انہیں معاہدوں پر دستخط کرنے کے لیے مجبور کیا۔

اس واقعے کے بعدملک کے صدر تھان سین نے اپوزیشن رہنما آنگ سان سوچی کی سربراہی میں ایک کمیشن بنایا جس کی رپورٹ کو اب تک منظرِ عام پر نہیں لایا گیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔