سوئس فیکٹری میں فائرنگ سے تین ہلاک

آخری وقت اشاعت:  بدھ 27 فروری 2013 ,‭ 17:40 GMT 22:40 PST
سوئٹزرلینڈ میں گن کرائم

سوئٹزرلینڈ کا شمار دنیا کے سب سے زیادہ اسلحہ رکھنے والے لوگوں والے ممالک میں تیسرے نمبر پر ہوتا ہے

سوئٹزرلینڈ کے شہر لوسرن میں ایک فیکٹری کے قریب فائرنگ کے نتیجے میں کم از کم تین افراد ہلاک اور سات کے قریب زخمی ہو گئے ہیں۔

پولیس کے مطابق بیالیس سالہ قاتل بھی ہلاک ہونے والوں میں سے ایک ہے۔

گولیاں چلنے کا سلسلہ مقامی وقت کے مطابق صبح نو بجے مینزانو کے قصبے میں واقع کرونوسپین کے لکڑی کے پلانٹ کی کنٹین پر شروع ہوا۔

استغاثہ کے ترجمان کے مطابق فائرنگ چند منٹ جاری رہی۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق پانچ زخمیوں کی حالت نازک ہے۔

سوئس نیوز ویب سائٹ 20 منٹس کے مطابق ایک شخص نے بتایا کہ جب قتلِ عام شروع ہوا تو وہاں کام کرنے والے مزدور کیفے ٹیریا میں تھے۔

کرونوسپین کے چیف ایگزیکیوٹو کرونوسپین مائرو کاپوزو نے ان افواہوں کی تردید کی ہے کہ ملازمتوں میں کٹوتی کا اعلان ہونے والا تھا۔

انہوں نے کہا کہ جس شخص نے فائرنگ کی ہے وہ کافی خاموش طبع کا آدمی تھا۔ انہوں نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا کہ وہ تو تقریباً لوگوں کو نظر ہی نہیں آتا تھا۔

سوئٹزرلینڈ کا شمار دنیا کے ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں بندوقیں رکھنے کی سب سے زیادہ شرح ہے۔ ملک کے اسی لاکھ افراد کے پاس تیئس لاکھ کے قریب آتشی اسلحہ موجود ہے لیکن اس طرح کے جرائم بہت کم ہوتے ہیں۔

اٹھارہ اور چونتیس سال کے تقریباً تمام صحت مند سوئس افراد کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ فوجی تربیت حاصل کریں اور ان سب کو ہی پستول یا رائفلیں دی جاتی ہیں جو انہیں گھروں پر ہی رکھنا ہوتی ہیں۔

اب سے کچھ عرصہ پہلے تک بہت سے افراد نے فوجی تربیت مکمل کرنے کے بعد بھی اپنے ہتھیار اپنے پاس ہی رکھے تھے، حالانکہ اب اس کے متعلق قوائد و ضوابط بدل چکے ہیں۔

جینیوا میں مقیم سمال آرمز سروے گروپ کے مطابق سوئٹزرلینڈ کا شمار امریکہ اور یمن کے مطابق سب سے زیادہ اسلحہ رکھنے والوں میں ہوتا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔