شمالی کوریا پر اقوام متحدہ کی نئی پابندیاں

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 مارچ 2013 ,‭ 20:41 GMT 01:41 PST

اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل نے متفقہ طور پر شمالی کوریا کی جانب سے پچھلے ماہ کیے گئے ایٹمی تجربے کے جواب میں نئی پابندیوں کی منظوری دی ہے۔

نئی پابندیوں میں شمالی کوریا کے سفارت کاروں، رقم کی ٹرانسفر اور لگژری اشیا تک رسائی کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

اقوام متحدہ نے شمالی کوریا کے تین افراد اور فوج سے تعلق رکھنے والی دو کمپنیوں کے اثاثے منجمد کرنے اور سفر پر پابندی بھی عائد کی ہے۔

سکیورٹی کونسل نے قرارداد 2094 کو متفقہ طور پر منظور کیا جس کے تحت شمالی کوریا پر چوتھی بار پابندیاں عائد کی جائیں گی۔

قرارداد کی منظوری کے بعد اقوام متحدہ میں امریکہ کی سفیر سوزن رائس نے کہا کہ ان پابندیوں سے شمالی کوریا کی ایٹمی پروگرام کے حوالے سے صلاحیت پر اثر پڑے گا۔

انہوں نے متنبہ کیا کہ عالمی برادری شمالی کوریا پر مزید پابندیاں عائد کرے گی اگر اس نے دوبارہ ایٹمی تجربہ کیا۔

چین کے سفیر نے قرارداد کی منظوری کے بعد کہا کہ کوریا میں کشیدگی کو کم کرنا اولین ترجیح ہے اور شمالی کوریا کے ایٹمی پروگرام پر چھ ممالک کے مذاکارت کا دوبارہ آغاز ہونا چاہیے۔

یاد رہے کہ شمالی کوریا پہلے دو ہزار چھ اور نو میں جوہری تجربے کر چکا ہے اور حال ہی میں اس نے ایک اور تجربہ کرنے کی بات کی تھی۔

شمالی کوریا گزشتہ ایک دہائی سے اپنے جوہری پروگرام پر چین، امریکہ، جنوبی کوریا اور روس سے بات چیت کر رہا ہے اور وعدہ کرتا رہا ہے کہ خوراک اور توانائی کے بدلے میں وہ اپنا جوہری پروگرام ختم کر دے گا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔