شیر نے خاتون کو ہلاک کر ڈالا

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 مارچ 2013 ,‭ 04:18 GMT 09:18 PST

اس چار سالہ شیر کو اس وقت اس چڑیا گھر لایا گیا تھا جب اس عمر آٹھ ہفتے تھی

امریکی ریاست کیلی فورنیا کے ایک تفتیش کار نے کہا ہے کہ ایک شیر نے اپنے پنجے سے ادھ کھلا دروازہ کھولا اور پنجرے سے نکل کر ایک رضاکار خاتون کو ہلاک کر دیا۔

فریسنو کاؤنٹی کے تفتیش کار ڈیوڈ ہیڈن نے کہا کہ تفتیش کاروں کا خیال ہے کہ شیر نے ڈایانا ہینسن کو اس وقت ہلاک کیا جب وہ ایک بڑا پنجرہ صاف کر رہی تھیں۔

شیر نے 24 سالہ خاتون کی گردن توڑ دی جس سے ان کی موت واقع ہو گئی۔

پولیس شیر کو گولی مار کر ہلاک کر کے ہینسن کے پاس پہنچی۔ اس وقت وہ شدید زخمی لیکن زندہ تھیں۔

تفتیش کار ہیڈن نے کہا، ’شیر کو خوراک دے دی گئی تھی اور خاتون بڑا پنجرہ صاف کر رہی تھیں، جب کہ شیر چھوٹے پنجرے میں تھا۔ انھوں نے کہا کہ چھوٹے پنجرے کا دروازہ آدھا کھلا ہوا تھا، جس کو شیر نے پنجے سے کھول دیا۔

تفتیش کار نے تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ شیر نے پنجہ مار کر خاتون کی گردن توڑ دی۔ اس کے بعد ان کے جسم پر کاٹنے اور پنجوں سے آنے والے زخموں کے نشان پائے گئے۔

اس چڑیا گھر کو ’کیٹ ہیون‘ کہا جاتا ہے، اور یہ بدھ کے روز بند تھا۔ حملے کے وقت صرف ایک اور ملازم وہاں موجود تھا۔

کیٹ ہیون کے بانی ڈیل اینڈرسن نے کہا کہ دو دوسرے ملازم ایک چیتے کو ایک مقامی سکول میں نمائش کے لیے لے کر گئے ہوئے تھے۔

خاتون کو ان کے والد نے شناخت کیا۔ خبررساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس نے ان کے حوالے سے بتایا ہے کہ چڑیا گھر میں کام کرنا ڈایانا کی زندگی کی آرزو تھی۔

وہ اس چڑیا گھر میں گذشتہ دو ماہ سے کام کر رہی تھیں۔

ان کے والد نے کہا کہ انھیں شیروں اور چیتوں کے ساتھ کام کرنے میں کوئی مسئلہ نہیں تھا، لیکن انھوں نے کہا کہ انھیں شیر کے پنجرے کے اندر جانے کی اجازت نہیں ہے۔

شیر کا نام کوسکوس تھا، اور جب اسے کیٹ ہیون لایا گیا اس وقت اس کی عمر آٹھ ہفتے تھی۔

یہ چڑیا گھر 1993 میں قائم کیا تھا اور اس میں بنگال ٹائیگر، سائبیرین جنگلی بلے، تیندوے، اور چیتے موجود ہیں۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔