نائجیریا میں غیرملکی مغویوں کی ہلاکت کی تحقیقات

آخری وقت اشاعت:  اتوار 10 مارچ 2013 ,‭ 01:43 GMT 06:43 PST

انصارو گروپ کو جو پچھلے سال سامنے آیا باکو حرم اسلامی شدت پسند تنظیم کا شاخ سمجھا جاتا ہے

برطانوی سفارت کار شدت پسندوں کی طرف سے گذشتہ مہینے شمالی نائجیریا سے اغوا کیے گئے غیر ملکی مغویوں کی ہلاکت کے دعوے کی تحقیقات کر رہے ہیں۔

یاد رہے کہ انٹرنیٹ پر شائع ایک بیان میں نائجیریا سے تعلق رکھنے والے انصارو نامی شدت پسند گروپ نے کہا تھا کہ انہوں نے اغوا کیے گئے غیر ملکیوں کو ہلاک کر دیا تھا۔

برطانیہ کے دفترِ خارجہ نے کہا ہے کہ انہیں ان خبروں کی اطلاعات ہیں اور وہ اس کی ہنگامی بنیادوں پر تحقیقات کر رہے ہیں۔

خیال رہے کہ برطانیہ، یونان، اٹلی اور لبنان کے باشندوں کو گذشتہ مہینے نائجیریا کی شمالی ریاست باوچی سے اغوا کیا گیا تھا۔

انصارو گروپ کو جو پچھلے سال سامنے آیا باکو حرم اسلامی شدت پسند تنظیم کا شاخ سمجھا جاتا ہے۔

انصارو کی طرف سے جاری بیان میں تصاویر بھی شامل تھیں جس میں ایک بندوق بردار شخص کم از کم ایک لاش کے ساتھ کھڑا دکھائی دیتا ہے تاہم اس کی ابھی تک تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

ان سات غیر ملکیوں کو سیٹارکو کمپنی کی ملکیت والے تعمیراتی کام کے علاقے پر چھاپے کے دوران اغوا کیا گیا تھا جس میں ایک محافظ بھی ہلاک ہوا تھا۔

انصارو نے کہا تھا کہ مغویوں کو برطانوی اور نائجیریا کے سکیورٹی فورسز کی طرف سے بازیاب کرانے کی کوشش کی وجہ سے ہلاک کیا گیا تھا۔تاہم برطانوی حکام نے بتایا کہ وہ اس قسم کے کسی کوشش سے بے خبر تھے۔

گذشتہ سال سپیشل سکیورٹی فورسز کی طرف سے انصاور کے قبضے سے ایک برطانوی اور ایک اٹلی کے باشندے کو بازیاب کرانے کے لیے ناکام کوشش کی گئی تھی۔جس میں دونوں مغوی ہلاک ہوگئے تھے۔

انصارو کا کہنا ہے کہ انہوں نے حالیہ اغوا اسلام کے خلاف یورپی اقوام کے مظالم کا بدلہ لینے کے لیے کیے تھے۔

برطانوی حکومت نے انصارو گروپ کو القائدہ اور اسلامی مغرب تنظیموں کے ساتھ منسلک ’دہشت گرد‘ تنظیم قرار دیا ہے۔

انصارو نے پہلی بار نائجیریا کے داراخلافہ ابوجہ میں نومبر 2012 میں ایک پولیس چوکی پر حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

شمالی نائجیریا میں شدت پسند تنظیموں نے حالیہ سالوں میں تشدد کے مہم کو تیز کر دیا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔