امریکہ کا میزائل شکن دفاعی نظام بڑھانے کا اعلان

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 16 مارچ 2013 ,‭ 07:41 GMT 12:41 PST

چک ہیگل کا کہنا تھا کہ امریکہ کو خطرات سے نمٹنے میں پہل کرنے کی ضرورت ہے۔

امریکہ کے وزیرِ دفاع چک ہیگل نے شمالی کوریا کی طرف سے خطرے کے پیشِ نظر ملک کے مغربی ساحل پر میزائل شکن دفاعی نظام بڑھانے کے منصوبے کا اعلان کیا ہے۔

امریکی وزیرِ دفاع نے شمالی کوریا کی جانب سے بڑھتے ہوئے خطرات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ 2017 تک کیلیفورنیا اور الاسکا میں چودہ مزید میزائل شکن آلات لگائے گا۔ان ریاستوں میں پہلے ہی سے تیس میزائل شکن آلات نصب ہیں۔

شمالی کوریا نے گذشتہ مہینے تیسرا نیوکلئر دھماکہ کیا تھا اور امریکہ پر نیوکلئر حملے میں پہل کرنے کی دھمکی دی تھی۔

تاہم ماہرین کا خیال ہے کہ شمالی کوریا کو امریکہ تک رسائی کے لیے نیوکلئر ہتھیار لے جانے والے میزائل تیار کرنے میں کئی سال لگیں گے۔

چک ہیگل نے جمعہ کو پریس کانفرنس میں کہا کہ ’مریکہ کے پاس محدود پیمانے پر انٹر کانٹیننٹل بیلیسٹک میزائل یا براعظموں کے مابین دور تک حملے کی صلاحیت رکھنے والے میزائلوں کے خلاف دفاع کرنے کا نظام ہے۔‘

"مریکہ کے پاس محدود پیمانے پر انٹر کانٹیننٹل بیلیسٹک میزائل یا براعظموں کے مابین دور تک حملے کی صلاحیت رکھنے والے میزائلوں کے خلاف دفاع کرنے کا نظام ہے۔لیکن شمالی کوریا نے حالیہ وقتوں میں اپنی صلاحیتیں بڑھائیں ہیں اور وہ غیر ذمہ دارانہ اور بے پرواہ اشتعال انگیزی میں ملوث رہا ہے"

چک ہیگل، امریکی وزیرِ دفاع

انہوں نے کہا ’لیکن شمالی کوریا نے حالیہ وقتوں میں اپنی صلاحیتیں بڑھائیں ہیں اور وہ غیر ذمہ دارانہ اور بے پرواہ اشتعال انگیزی میں ملوث رہا ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ امریکہ کو خطرات سے نمٹنے میں پہل کرنے کی ضرورت ہے۔

چک ہیگل نے کہا کہ ’الاسکا کے فورٹ گریلائے میں نصب کیے جانے ولے میزائل شکن آلات پر ایک بلین امریکی ڈالر خرچ ہونگے۔‘

امریکہ اپنی حکمت عملی کے تحت جاپان میں بھی ایک ریڈار سسلٹم نصب کرے گا۔ اس مقصد کے لیے پینٹاگون یورپ میں میزائل شکن دفاعی نظام سے فندز کو منتقل کرے گا۔

چک ہیگل نے یورپ میں اتحادی ممالک کو یقین دہانی بھی کروائی ہے کہ ان کی حفاظت کے معیار کو کسی طور کم نہیں کیا جائے گا۔

سب سے پہلے سابق امریکی صدر جارج بش نے یورپ میں میزائل شکن دفاعی نظام نصب کرنے کی تجویز دی تھی۔

جس کے بعد صدر براک اباما نے یورپ کے لیے دفاعی نظام کو محدود کر دیا۔

الاسکا اور کلیفورنیا میں میزائل دفاعی نظام کے سائٹ کو شمالی کوریا کے حملے کے خطرے کے پیشِ نظر سابق امریکی صدر جارج بش کی دورِ حکومت میں بنایا گیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔