’القاعدہ نے فرانسیسی یرغمالی ہلاک کر دیا‘

آخری وقت اشاعت:  بدھ 20 مارچ 2013 ,‭ 05:42 GMT 10:42 PST

فلپ کو ان کے ایک ساتھی سمیت نومبر سال دو ہزار گیارہ میں ایک ہوٹل سے اغوا کیا گیا تھا

شمالی افریقہ میں القاعدہ سے منسلک ایک گروپ کا کہنا ہے کہ اس نے مالی میں فرانسیسی فوج کی مداخلت کے جواب میں اپنی تحویل میں موجود فرانسیسی یرغمالی کو ہلاک کر دیا ہے۔

اسلامی المغرب میں القاعدہ’اے کیو آئی ایم‘ کے ایک ترجمان نے موریطانیہ کے خبر رساں ادارے اے این آئی کو بتایا کہ فرانسیسی تاجر فلپ ورڈن کو مالی میں فرانس کی مداخلت کے جواب میں رواں ماہ کی دس تاریخ کو ہلاک کر دیا گیا ہے۔

فرانسیسی شہری کو مالی میں سال دو ہزار گیارہ میں اغواء کیا گیا تھا اور اسی گروہ نے انہیں اغواء کرنے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

کلِک صحارا نیا افغانستان بن رہا ہے؟

فرانسیسی وزارتِ خارجہ کا کہنا ہے کہ وہ ان اطلاعات کر تصدیق کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

فرانس نے رواں سال جنوری میں القاعدہ سے منسلک شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کے لیے چار ہزار فوجی مالی بھیجے تھے۔

حالیہ دنوں میں فرانس کی سربراہی میں سکیورٹی فورسز شمالی مالی کے پہاڑی علاقوں میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائیوں میں مصروف ہے۔

افریقہ میں فلپ ورڈون سمیت چودہ فرانسیسی شہریوں کو اسلامی گروہوں نے یرغمال بنا رکھا ہے اور ان میں سے چھ کے بارے میں خیال کیا جا رہا ہے کہ وہ مالی میں ہیں۔

فرانس نے آئندہ ماہ مالی سے اپنی فوج نکالنے کا اعلان کر رکھا ہے اور خیال کیا جا رہا ہے کہ اس کی جگہ مغربی افریقہ کے ممالک اپنے فوجی بھیجے گئے تاکہ جولائی میں عام انتخابات کا انعقاد ہو سکے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔