’پیٹریئٹ میزائل سے باغی علاقوں کی حفاظت‘

شام میں بشار الاسد حکومت کے مخالف شامی قومی اتحاد کے سربراہ نے عرب لیگ کے اجلاس میں امریکہ سے درخواست کی ہے کہ وہ پیٹریئٹ میزائل سے باغیوں کے زیرِ کنٹرول علاقوں کی حفاظت کرے۔

تاہم نیٹو نے فوری طور پر ایک بیان میں اس تجویز کو رد کر دیا ہے۔

معاذ الخطیب نے یہ تجویز قطر میں ہونے والے عرب لیگ کے اجلاس میں دی۔ اس اجلاس میں باغی گروپ نے پہلی بار شرکت کی ہے۔

الخطیب نے اپنی تقریر میں عالمی برادری کی جانب سے باغیوں کو اپنے علاقوں کی حفاظت کرنے کے لیے مدد فراہم نہ کرنے کے لیے دیے جانے والے دلائل کو مسترد کیا۔

الخطیب نے یہ نہیں کہا کہ آیا انہوں نے حکومت کے مخالف شامی قومی اتحاد کے سربراہ کے طور پر دیے گئے استعفے کو واپس لیا ہے یا نہیں۔

یاد رہے کہ معاذ الخطیب نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ ان کو چار ماہ قبل اس اتحاد کا مرکزی رہنما منتخب کیا گیا تھا۔

معاذ الخطیب نے سماجی روابط کی ویب سائٹ فیس بک پر اپنے پیغام میں لکھا ہے کہ عالمی طاقتیں باغیوں کی مدد کرنے میں ناکام رہی ہیں اور وہ اتحاد سے باہر رہ کر ہی حالات بہتر بنا سکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’میں قومی اتحاد سے الگ ہونے کا اعلان کرتا ہوں تاکہ میں اس آزادانہ طریقے سے کام کر سکوں جو کہ وہاں رہتے ہوئے ممکن نہ تھا۔‘

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ’گزشتہ دو برس سے ظالم حکومت ہمیں ذبح کر رہی ہے جبکہ دنیا یہ سب صرف دیکھے جا رہی ہے۔‘

تجزیہ کاروں کے خیال میں معاذ الخطیب شامی قومی اتحاد پر اسلام پسندوں اور قطر جیسی بیرونی طاقتوں کے اثر پر خوش نہیں۔

اس سے قبل عرب لیگ کے اجلاس میں بشارالاسد حکومت کے مخالف شامی قومی اتحاد کے سربراہ نے شام کی نمائندگی کی۔

الخطیب نے جب کرسی پر تشریف رکھی تو اجلاس میں دیگر ممالک کے رہنماؤں نے تالیاں بجائیں۔

تاہم دمشق نے عرب لیگ سے اس حوالے سے احتجاج کیا ہے۔ یاد رہے کہ عرب لیگ نے دمشق کی رکنیت نومبر 2011 میں ختم کر دی تھی۔

اسی بارے میں