پراگ: بم دھماکے میں 40 افراد زخمی

Image caption دھماکے سے تقریباً 40 افراد زخمی ہو گئے

مشرقی یورپ کے ملک جمہوریہ چیک کے دارالحکومت پراگ میں ایک عمارت میں زور دار دھماکا ہوا ہے، جس میں تقریباً چالیس افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

زخمی ہونے والے چار افراد کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔ دارلحکومت کے مرکز میں ہونے والے زور دار دھماکے کے نتیجے عمارت شدید نقصان پہنچا ہے۔ جس کے بعد پولیس نے علاقے کو سیل کر دیا ہے

دارلحکومت پراگ کے مئیر نے سرکاری ریڈیو کو بتایا کہ عمارت کے ملبے میں سے تین افراد کو نکالا گیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے سے عمارت کے شیشے ٹوٹ گئے۔ خیال کیا جا رہا ہے کہ گیس کا اخراج زور دار دھماکے کی وجہ بنا ہے۔

پراگ کے میئر کا کہنا ہے کہ ممکنہ طور پر اب بھی لوگ ملبے میں پھنسے ہوئے ہیں۔

دھماکے کے بعد نزدیک کی عمارتیں بھی خالی کروا لی گئی ہیں۔

بہت سے لوگوں نے کہا کہ پراگ کے قدیم حصے میں دھماکے سے پہلے اور بعد میں گیس کی تیز بو محسوس کی گئی۔

دھماکے کا مقام ولاٹا دریا سے قریب ہے۔

Image caption پراگ میں دھماکے کے بعد فائر فائٹر اور دوسرے امدادی کارکن موقعے پر پہنچ گئے

دھماکے کے بعد آس پاس کے دو کلومیٹر کے علاقے میں عمارتیں خالی کروا لی گئیں، اور دریا کا کنارہ سیل کر دیا گیا۔

برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز کے مطابق پولیس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اس عمارت میں انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن کا دفتر، آرٹ گیری اور ایک فلم سکول بھی تھا۔ اس کے علاوہ ایک مقامی یونیورسٹی کے سوشل سائنس کی فیکلٹی بھی عمارت میں کام کر رہی تھی۔

پولیس ترجمان نے بتایا کہ دھماکے کے وقت عمارت میں 15 افراد موجود تھے۔

ایک عینی شاہد نے بی بی سی کو بتایا کہ‘ ہم نےایک زور دار دھماکے کے آواز سنی اور ہمیں لگا جیسے عمارت لرز اُٹھی ہے اور کھڑکیاں ٹوٹ گئی ہیں۔‘