تباہ شدہ امریکی طیارہ، پائلٹوں کی لاشیں مل گئیں

Image caption امریکی طیارہ گرتے ہی شعلوں میں دیکھا گيا تھا

کرغزستان کی حکومت کا کہنا ہے کہ جمعے کے روز امریکہ کا جو کارگو طیارہ گر کر تباہ ہوگیا تھا اس کے دو پائلٹوں کی لاشیں مل گئی ہیں۔

افغانستان میں نیٹو افواج کے لیے ایندھن لے جانے والا ٹینکر طیارہ جمعہ کو کرغزستان میں ہوائی اڈے سے اڑنے کے تھوڑی دیر تباہ ہو گیا تھا۔

ہنگامی حالات کے لیے مختص وزارت نے خبر رساں اداروں کو بتایا ہے کہ سنیچر کی صبح تلاش کرنے والی ٹیم کو اس طیارے کی باقیات حاصل ہوئیں لیکن ابھی عملے میں شامل تیسرے شخص کی تلاش جاری ہے۔

کرغزستان میں مقامی میڈیا نے بعض عینی شاہدین کو یہ کہتے دکھایا ہے کہ انہوں نے حادثے کے فورا بعد کم سے کم ایک پائلٹ کو شعلوں سے بچتے ہوئے دیکھا۔

لیکن اس خبر پر اس لیے شک و شبہہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ کارگو طیاروں میں عام طور پر پائلٹ کی سیٹ میں ایجیکٹنگ نظام نہیں ہوتا ہے۔

امریکہ کرغزستان کے ہوائی اڈے سے افغانستان میں موجود اپنی فوجیوں کو سازو سامان مہیا کرتا ہے۔

اطلاعات کے مطابق امریکی ٹینکر طیارہ کرغزستان کے دارالحکومت بشکیک کے نزدیک مانس کے ہوائی اڈے سے اڑنے کے تھوڑی دیر بعد ہی تباہ ہوگیا تھا۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق طیارہ ہوا میں دھماکے سے پھٹ گیا اور اس کے تین ٹکڑے ہوا میں دیکھے گئے۔

عینی شاہدین نے مقامی ذرائع ابلاغ کو بتایا ہے کہ انہوں نے دھماکے کی آواز سنی جس کے بعد طیارے کے ٹکڑے دیکھے گئے۔

امریکی ٹینکر طیارہ افغانستان برسرپیکار افواج کے ایندھن لے کر جا رہا تھا اور اس وقت ریڈار غائب ہو گیا جب وہ پہاڑی گاؤں چلدیبار کے قریب پہنچا۔

گزشتہ چند دنوں میں یہ دوسرا امریکی طیارہ تھا جوگر کر تباہ ہوا۔ اس سے قبل پیر کے روز بگرام کے ہوائی اڈے سے اڑنے والا امریکی طیارہ تباہ ہوگیا تھا جس میں عملے کے سات افراد ہلاک ہو گئے تھے۔