بنگلہ دیش، طوفان کے سبب ساحلی علاقوں میں ریڈ الرٹ

Image caption طوفان مہاسین سے لاکھوں لوگوں کے متاثر ہونے کا خطرہ ہے

بنگلہ دیش میں طوفان مہاسین کے خطرے کے سب حکام نے ساحلی علاقوں میں رہنے والے لاکھوں لوگوں کو علاقہ سے نکالنے کا کام شروع کر دیا ہے۔

حکام نے چٹگانگ اور ساحلی کوکس بازار ضلع کے ترائی والے علاقوں میں خطرے کی سطح بڑھا کر دس میں سات کر دی ہے۔

طوفان خلیج بنگال سے ہوتا ہوا شمال مشرق کی طرف بڑھ رہا ہے جو جمعرات تک بنگلہ دیش کے علاقوں تک پھیلنے کا امکان ہے۔

بنگلہ دیش کے محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ ساحلی علاقوں میں دو میٹر تک اونچی لہریں اٹھ سکتی ہیں اور طوفان سے بچنے کے لیے لوگوں پناہ گاہیں تیار کرنے کی ضرورت ہے۔

اس دوران کوکس بازار اور چٹگانگ کے ایئر پورٹ کو بند کر دیا گيا ہے۔

انسانی امور سے متعلق اقوام متحدہ کے دفتر کا کہنا ہے کہ طوفان مہاسین پہلے سے تھوڑا کمزور پڑا ہے لیکن ادارہ نے اسے اب بھی '' زندگي کے لیے خطرے'' سے تعبیر کیا ہے۔

اس طوفان سے برما کے بعض علاقے بھی خطرے کی زد میں آسکتے ہیں اس لیے وہاں بھی انخلاء کا عمل شروع کیا گيا ہے۔

برما میں فسادات سے متاثّرہ دسیوں ہزار روہنجیا مسلمان برما کے انہیں ساحلی علاقوں میں رہتے ہیں جہاں طوفان کے آنے کا خطرہ ہے۔

یہ مسلمان فرقہ وارانہ فسادات کے سبب بے گھر ہوئے ہیں اور ان علاقوں میں آکر بسے ہیں جو اب خوف کے سبب دوبارہ اپنے گھروں کو واپس نہیں جانا چاہتے۔

حیلا مونگ نامی ایک شخص کا کہنا تھا کہ بودھوں اور مسلمانوں کے درمیان ہوئے فسادات میں ان کی ماں اور دونوجوان بیٹیاں ہلاک ہوگئیں۔

ان کا کہنا تھا ’میں ہر چیز ضائع کر چکا ہوں اس لیے اب اللہ سے یہی دعا کرتا ہوں کہ یہاں پر رہنے والے تمام لوگوں کی موت اسی آنے والے طوفان میں ہو جائے۔ میں کہیں بھی نہیں جانا چاہتا۔ میں یہیں رہنا چاہتا ہوں اور اگر موت آنی ہے تو یہیں آئے۔‘

ادھر اطلاعات ہیں کہ انخلاء کے عمل کے دوران برما میں ایک کشتی کے ڈوبنے سے پچاس سے زیادہ روہنجيا مسلم ہلاک ہوگئے۔

برما میں دو ہزار آٹھ میں آنے والے طوفان نرگس میں ایک لاکھ سے زیادہ لوگ مارے گئے تھے۔

اسی بارے میں