فلپائن: ابو سیاف اور فوج میں جھڑپیں، 11 ہلاک

فلپائن فوجی (فائل فوٹو)
Image caption فلپائن میں فوج اور اسلامی شدت پسند گروپ میں ایک عرصے سے لڑائی جاری ہے

فلپائن کی فوج کا کہنا ہے کہ ملک کے جنوب میں شدت پسند تنظیم ابو سیاف کے ساتھ جھڑپوں میں سات فوجی اور چار عسکریت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔

فوجی ترجمان بریگیڈیئر جنرل ڈومینگو توتان نے کہا کہ ان ہلاکتوں کے علاوہ نو فوجی اور ابو سیاف کے کچھ عسکریت پسند زخمی بھی ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ صوبہ سولو میں پاٹیکل قصبے میں لڑئی اس وقت شروع ہوئی جب فوج نے عسکریت پسندوں کا پیچھا کیا۔

انہوں نے بتایا کہ’پاٹیکل قصبے کے مضافات میں تقریباً ایک گھنٹے تک لڑائی جاری رہی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ فوج ان جنگجوؤں کا سراغ لگا رہی تھی جس کی سربراہی ابو سیاف کے کمانڈر جولاسوان ساوادجان کر رہے تھے۔

فوجی ترجمان نے کہا کہ جولاسوان ساوادجان اغوا برائے تاوان کی کئی کارروائیوں میں ملوث ہیں۔

Image caption ابو سیاف نے امن معاہدے پر دستخط نہیں کیا اور وہ بدستور برسرپیکارہے

ابو سیاف کو جنوبی فلپائن میں چھوٹی لیکن سب سے زیادہ باغی اسلامی شدت پسند تنظیم تصور کیا جاتا ہے جواغوا کے کئی واقعات میں ملوث رہا ہے۔

یہ گروپ ان غریب علاقوں میں سرگرم ہے جہاں مسلمان اقلیت خودمختاری کے لیے کئی دہائیوں سے جدوجہد کر رہے ہیں۔

مسلمانوں کی بڑی علیحدگی پسند تنظیم مورو اسلامک لبریشن فرنٹ نے گذشتہ سال حکومت کے ساتھ زیادہ خودمختاری کے عوض امن معاہدہ کیا تھا۔

ابو سیاف ان باغی گروپوں میں سے تھا جس نے حکومت کے ساتھ امن معاہدے پر دستخط نہیں کیے۔

واضح رہے کہ امریکہ ابوسیاف گروہ کو دہشت گرد گروپ مانتا ہے اور اس کا کہنا ہے کہ اس کا دہشت گرد تنظیم القاعدہ سے تعلق ہے۔

اسی بارے میں