عالمی عدالت پر نسلی امتیاز برتنے کا الزام

افریقی ممالک کی تنظیم افریقی یونین نے جرائم کی بین الاقوامی عدالت (آئی سی سی) پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ افریقیوں کو نسل کی بنیاد پر نشانہ بنا رہی ہے۔

ایتھوپیا کے وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ آئی سی سی نے کینیا کے صدر پر انسانیت کے خلاف جرائم کے الزامات کی وجہ سے ان کی مخالفت کی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ افریقی یونین اس معاملے پر اقوامِ متحدہ کو اپنی تشویش سے آگاہ کرے گی۔

خیال رہے کہ کینیا کے صدر پر انسانیت کے خلاف جرائم کے الزامات کے تحت جولائی میں مقدمہ چلایا جائے گا۔

ایتھوپیا کے دارالحکومت ادیس بابا میں افریقی یونین کے سربراہی اجلاس کے بعد ایتھوپیا کے وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ افریقی رہنماؤں نے اس بات پر تشویش کا اظہار کیا ہے کہ آئی سی سی کی جانب سے فردِ جرم عائد کیے جانے والے 99 فیصد افریقی ہیں۔

انھوں نے مزید کہا کہ یہ اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ آئی سی سی کے سسٹم میں کچھ خرابیاں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جرائم کی بین الاقوامی عدالت کے قیام کا مقصد سزاؤں کو معاف کرنے کے کلچر کا خاتمہ تھا تاہم اب اس کا مقصد نسل کی بنیاد پر نشانہ بنانا ہے۔

جرائم کی بین الاقوامی عدالت نے کینیا کے صدر پر انسانیت کے خلاف جرائم کے الزامات کی وجہ سے ان کی مخالفت کی تھی۔

کینیا کے صدر خود پر لگنے والے ان الزامات کی تردید کرتے ہیں۔

کینیا کے صدر پر سنہ 2007 کے انتخابات کے بعد تشدد کو بڑھانے کا الزام ہے۔

ان فسادات میں 1,000 افراد ہلاک جبکہ چھ لاکھ افراد کو اپنا گھر چھوڑ کر فرار ہونا پڑا تھا۔

عالمی عدالت ماضی میں کئی بار سوڈان کے صدر عمر بشیر کے خلاف بھی وارنٹ جاری کر چکی ہے۔

اسی بارے میں