سنوڈن کی برطانیہ داخلے پر پابندی

Image caption سنوڈن نے گارڈین اخبار کو بتایا تھا کہ امریکی خفیہ ادارہ این ایس اے امریکی انٹرنیٹ اور ٹیلی فون کمپنیوں سے ڈیٹا حاصل کرتا ہے

ایک رپورٹ کے مطابق برطانوی حکومت نے ہوائی کمپینوں کو خبردار کیا ہے کہ امریکی حکومت کے نگرانی سے متعلق خفیہ راز افشا کرنے والے سی آئی اے کے اس سابق ملازم کو برطانیہ نہ آنے دیا جائے۔

امریکی خبررساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کہا ہے کہ اس نے تھائی لینڈ کے ایک ہوائی اڈے پر ایک دستاویز دیکھی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ 29 سالہ ایڈورڈ سنوڈن کو برطانیہ نہ آنے دیا جائے۔

برطانیہ کے ہوم آفس کے لیٹر ہیڈ پر لکھے گئے اس خط کے مطابق اس بات کا قوی امکان ہے کہ سنوڈن کو برطانیہ میں داخلے کے اجازت نہیں دی جائے گی۔

ہوم آفس نے اس خبر پر تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔

اے پی کے مطابق یہ تنبیہ ہوم آفس کے بین الاقوامی نیٹ ورک کے دفتر نے پیر کے روز جاری کی تھی۔

خط میں سنوڈن کی تصویر ہے اور اس کی تاریخ پیدائش اور پاسپورٹ کا نمبر بھی دیا گیا ہے۔

اس میں کہا گیا ہے: ’اگر یہ شخص برطانیہ سفر کرنے کی کوشش کرے تو ہوائی کمپنیاں اسے جہاز پر سوار نہ ہونے دیں۔‘

خط میں ہوائی کمپنیوں کو خبردار کیا گیا ہے کہ اگر سنوڈن کو برطانیہ کا سفر کرنے دیا گیا تو ان کی گرفتاری اور بے دخلی کا خرچ ہوائی کمپنیوں کو برداشت کرنا پڑے گا۔

اے پی نے کہا ہے بنکاک ایئر ویز، سنگاپور ایئر لائنز اور ملیشیا ایئرلائنز نے تصدیق کی ہے کہ انھیں بھی یہ نوٹس ملا ہے۔

سنوڈن نے گارڈین اخبار کو بتایا تھا کہ امریکی خفیہ ادارہ این ایس اے امریکی انٹرنیٹ اور ٹیلی فون کمپنیوں سے لوگوں کا ڈیٹا حاصل کرتا ہے۔

اب تک سنوڈن کی گرفتاری کے لیے کوئی وارنٹ جاری نہیں کیا گیا لیکن بعض امریکی سیاست دانوں نے ان پر غداری کا مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا ہے۔

اسی بارے میں