’پہلے قراردادیں مانیں، پھر بات چیت ہوگی‘

Image caption شمالی کوریا کو بظاہر اقوامِ متحدہ کی جانب سے سخت پابندیوں اور جنوبی کوریا اور امریکہ کی مشترکہ جنگی مشقوں پر غصہ تھا

امریکہ نے کہا ہے کہ وہ شمالی کوریا کے ساتھ اُن کے جوہری پروگرام پر مذاکرات کرنے کے لے تیار ہے لیکن اس سے پہلے پیانگ یانگ اقوامِ متحدہ کی سکیورٹی کونسل کی قرار دادوں کی پابندی کرنا ہوگی۔

یہ بات امریکی وائٹ ہاؤس نے شمالی کوریا کی طرف سے اعلیٰ سطح کے مذاکرات کی پیشکش کے جواب میں کہی ہے۔ شمالی کوریا نے مذاکرات کے لیے کوئی شرط نہ رکھنے کا کہا ہے تاہم اُن کا اصرار ہے کہ مذاکرات میں امریکی جوہری ہتھیاروں پر بھی بات ہونی چاہیے۔

اس سے پہلے شمالی کوریا کے سرکاری میڈیا نے کہا تھا کہ حکومت نے امریکہ کو اعلیٰ سطح کے مذاکرات کی پیشکش کی ہے۔

خبررساں ادارے کے سی این اے کے مطابق شمالی کوریا کے قومی دفاع کمیشن نے خطے میں امن و استحکام کی بحالی اور کشیدگی کم کرنے کے لیے امریکہ کو ’سنجیدہ مذاکرات‘ کی پیشکش کی۔

Image caption شمالی کوریا کے جوہری تجربے کے بعد امریکہ اور جنوبی کوریا کے ساتھ اس کے رشتے مزید کشیدہ ہوگئے

کمیشن نے اپنے بیان میں کہا کہ ان مذاکرات کے لیے وقت اور مقام کا تعین واشنگٹن اپنی مرضی کے مطابق کر سکتا ہے تاہم اس کے لیے پہلے سے کوئی شرط نہیں رکھی جائے گی۔

یاد رہے کہ جمعرات کو شمالی کوریا نے جنوبی کوریا کے ساتھ تجویز کردہ مذاکرات یہ کہتے ہوئے مسترد کر دیے تھے کہ جنوبی کوریا ’مغرور اور خود پسند رکاوٹیں‘ پیدا کر رہا ہے۔

شمالی کوریا نے کہا کہ جنوبی کوریا نے اپنے وفد کے سربراہ کو تبدیل کر کے ’دانستہ خلل اندازی‘ کی جس کے نتیجے میں دو ممالک کے حکام کے درمیان ہونے والی بات چیت شروع ہونے سے قبل ہی ختم ہو گئی۔

دوسری جانب سیول نے کہا کہ وہ اس قسم کے جوابی عمل سے مایوس ہوا ہے۔

اس سال کے اوائل میں پیانگ یانگ نے جنوبی کوریا اور امریکہ کو جوہری ہتھیار اور میزائلوں کے حملے کی دھمکی دی تھی۔

رواں سال فروری میں شمالی کوریا کے جوہری تجربے کے نتیجے میں اقوامِ متحدہ نے اس پر پابندیاں عائد کر دیں جس کے خلاف شمالی کوریا کی قیادت نے انتہائی سخت الفاظ میں بیان کا ایک سلسلہ جاری رکھا۔

شمالی کوریا نے جنوبی کوریا کے ساتھ ناگہانی اور بحرانی صورت حال میں استعمال کی جانے والی ہاٹ لائن کو بھی منقطع کر دیا اور ایک مشترکہ صنعتی پارک منصوبے سے اپنے کارکنوں کو بھی واپس بلا لیا تھا۔

شمالی کوریا کو بظاہر اقوامِ متحدہ کی جانب سے سخت پابندیوں اور جنوبی کوریا اور امریکہ کی مشترکہ جنگی مشقوں پر غصہ تھا۔

اسی بارے میں