برازیل: دس ہزار ڈاکٹروں کی تقرری کا منصوبہ

Image caption اس منصوبے کے تحت پہلی بار غیر ملکی ڈاکٹروں کی تقرری کی اجازت دی گئی ہے

برازیل میں حکام کا کہنا ہے کہ حکومت نے وسیع اصلاحات کے پروگرام کے تحت کم سہولیات والے علاقوں میں 10 ہزار ڈاکٹروں کی تقرری کے منصوبے کا اعلان کیا ہے۔

اس منصوبے کے تحت پہلی بار غیر ملکی ڈاکٹروں کی تقرری کی اجازت دی گئی ہے۔

یہ تقرری ستمبر سے شروع کی جائے گی۔ اس کے علاوہ یونیورسٹی کے طبی نصاب میں بھی تبدیلیاں کی جائیں گی۔

حکام کا کہنا ہے کہ سنہ 2015 سے میڈیکل کی ڈگری حاصل کرنے والے تمام ڈاکٹروں کو دو سال تک سرکاری شعبے میں خدمات فراہم کرنی ہوگی۔

یہ اصلاحات گزشتہ ایک ماہ تک جاری ملک گیر عوامی مظاہروں کا نتیجہ ہیں جس میں فٹبال کے عالمی کپ کے انعقاد کے ساتھ بڑے پیمانے پر خراب پبلک سروسز اور بدعنوانی کے خلاف احتجاج ہوئے تھے۔

برازیل کی وزارتِ صحت کا کہنا ہے کہ برطانیہ اور سوئیڈن کی طرز پر یہ ’مور ڈاکٹرز‘ والی سکیم تیار کی گئي ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ دوسرے ممالک کے ڈاکٹروں کی اسی صورت میں تقرری کی جائے گی جب انہیں برازیل کا کوئی باشندہ اس کے لیے نہیں مل رہا ہوگا۔

اطلاعات کے مطابق ڈاکٹروں کی آسامیوں کے بارے میں اشتہارات اس ماہ کے آخر میں دیے جائيں گے۔

برازیل کی صدر ڈیلما روزیف نے کہا ’مور ڈاکٹرز پروگرام کا بنیادی مقصد بیرون ممالک سے ڈاکٹروں کو بلانا نہیں ہے بلکہ اس کا مقصد ہیلتھ سروسز کو ملک کے اندرونی علاقوں تک لے جانا ہے‘۔

صدر روزیف نے بتایا کہ یہ منصوبے کسی طویل مدتی مسائل کے حل کے لیے نہیں بلکہ یہ ان برازیلی باشندوں کے لیے ہیں جنہیں ’ابھی اور یہیں‘ ڈاکٹروں کی ضرورت ہے۔

اس سکیم کے تحت جن ڈاکٹروں کی تقرری ہوگی انہیں 10 ہزار ریئیس یعنی 4,500 ہزار امریکی ڈالر سے کم معاوضہ دیا جائے گا۔

صدر نے سرجریز کی سہولیات کو بہتر بنانے کے لیے 30 لاکھ امریکی ڈالر کی سرمایہ کاری کا بھی اعلان کیا۔

حکومت کے منصوبے کے مطابق آئندہ سال سے میڈیکل کورسز میں 11,500 نشستوں کا اضافہ کیا جائے گا۔

برازیل میں اس وقت میڈیکل کی تعلیم مکمل کرنے کے لیے چھ سال کا کورس ہے اور اس کے بعد ہی کوئی میڈیکل پریکٹس شروع کر سکتا ہے۔

سوموار کو جاری منصوبوں میں اب وہاں میڈیکل کی ڈگری حاصل کرنے سے قبل طلبہ کو دو سال تک سرکاری شعبے میں کام کرنا ہوگا جس کا مطلب یہ ہوا کہ اب انہیں آٹھ سال میں میڈیکل گریجوئیٹ کی ڈگریاں ملیں گی۔

یاد رہے کہ برازیل میں ڈاکٹروں کی تنظیم نے ملک میں کیوبا کے ڈاکٹروں کو بلانے والے منصوبے کی مخالفت کی تھی اور سوموار کو اعلان کیے جانے والے منصوبے کو بھی وفاقی میڈیکل کونسل نے تنقید کا نشانہ بنایا۔

اسی بارے میں