امریکی ایلچی مذاکرات کے لیے مصر پہنچ گئے

Image caption محمد مرسی کی برطرفی کے بعد سے ان کی جماعت ان کی رہائی کے لیے ملک گیر احتجاج کر رہی ہے

مصر میں فوج کی حمایت یافتہ موجودہ حکومت سے بات چیت کے لیے امریکہ کے سینیئر ایلچی ولیم برنز قاہرہ پہنچ گئے ہیں جہاں وہ فوج کی پشت پناہی سے تشکیل پانے والی نئی حکومت کے عہدے داروں سے ملاقاتیں کریں گے۔

یہ جولائی کے آغاز میں صدر محمد مرسی کی معزولی کے بعد کسی اہم امریکی اہلکار کا مصر کا پہلا دورہ ہے۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ اپنے دو روزہ دورے میں ولیم برنز ہر قسم کے تشدد کے خاتمے اور جمہوری حکومت کو اقتدار کی منتقلی پر زور دیں گے۔ خیال رہے کہ امریکہ مصر کی فوج سے پہلے ہی معزول صدر مرسی کی رہائی کا مطالبہ کر چکا ہے۔

ولیم برنز ایک ایسے وقت میں مصر آئے ہیں جب عدالتی ذرائع کے مطابق پبلک پراسیکیوٹر نے محمد مرسی کی جماعت اخوان المسلمین کے چودہ رہنماؤں کے اثاثے منجمد کرنے کا حکم دیا ہے۔

اس کے علاوہ پبلک پراسیکیوٹر کا دفتر معزول صدر مرسی اور اخوان المسلیمن کے بعض اراکین کے خلاف جاسوسی، مظاہرین کو ہلاک کرنے پر اکسانے، فوجی بیرکوں پر حملہ کرنے اور ملکی معیشت کو نقصان پہنچانے جیسی شکایات کی تحقیقات بھی کر رہا ہے۔

اطلاعات کے مطابق جن رہنماؤں کے اثاثے منجمد کیے گئے ہیں ان میں اخوان المسلمین کے سربراہ محمد بدیع بھی شامل ہیں۔

Image caption پہلے ہی اخوان المسلیمن کے بعض اراکین کے خلاف شکایات کی تحقیقات کی جا رہی ہیں

محمد بدایع سمیت جماعت کے دیگر اعلیٰ رہنماؤں کے وارنٹ گرفتاری پہلے ہی جاری کیے جا چکے ہیں جبکہ معزول صدر محمد مرسی فوج کی حراست میں ہیں۔ اس دوران مرسی کے حامیوں اور مخالفین نے متعدد مظاہرے کیے ہیں۔

ولیم برنز انتظامیہ کے ارکان کے علاوہ فوجی رہنماؤں اور اہم تاجروں سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔

امریکہ مصر میں اسلام پسند رہنما محمد مرسی کی معزولی کے بعد کی صورتِ حال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔ اگر یہ بات واضح ہو گئی کہ یہ دراصل فوجی بغاوت ہے تو پھر امریکہ مصر کو دی جانے والی 1.3 ارب ڈالر سالانہ کی امداد منسوخ کر سکتا ہے۔

دریں اثناء مصر کی فوج کے سربراہ جنرل عبدالفتح السیسی نے اتوار کو تقریر میں محمد مرسی کو برطرف کرنے کے فیصلے کا دفاع کیا ہے۔

فوج کے سربراہ نے یہ بھی کہا کہ کسی بھی گروہ کو سیاست میں حصہ لینے سے روکا نہیں جائے گا۔

’ہر سیاسی طاقت کو لازمی اس بات کا احساس ہونا چاہیے کہ سیاسی زندگی میں ہر کسی کے لیے موقع موجود ہے اور کسی نظریاتی تحریک کو حصہ لینے سے روکا نہیں جا رہا ہے‘۔

مصر میں معزول صدر محمد مرسی کی برطرفی کے بعد سے ان کی جماعت ان کی رہائی کے لیے ملک گیر احتجاج کر رہی ہے جن میں اب تک درجنوں افراد مارے جا چکے ہیں۔اخوان المسلمین نے ایک بار پھر پیر کے روز احتجاج کی کال دی ہے۔

اسی بارے میں