جنسی زیادتی کی شکایت کرنے والی خاتون کو معافی

Image caption مارتے ڈیبرا دالیلو نے کہا تھا کہ وہ دبئی میں ایک بزنس دورے پر تھیں جب ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی

دبئی میں جنسی زیادتی کی شکایت کرنے والی خاتون نے کہا ہے کہ حکام نے انھیں معاف کر دیا گیا ہے اور وہ دبئی چھوڑ کر جا سکتی ہیں۔ اس سے پہلےناروے سے تعلق رکھنے والی اس خاتون مارتے ڈیبرا دالیلو نے دبئی میں اپنے ساتھ ہونے والی جنسی زیادتی کے واقعے کی رپورٹ کی تو انھیں گرفتار کر کے 16 ماہ قید کی سزا دی گئی تھی۔

مارتے ڈیبرا دالیلو کی رہائی پر ناروے کے وزیرِخارجہ نے کہا کہ ’مارتے کو رہا کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں مدد کرنے والے تمام لوگوں کا شکریہ۔‘

مارتے ڈیبرا دالیلو نے کہا تھا کہ وہ دبئی میں ایک بزنس دورے پر تھیں جب ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی۔ چوبیس سالہ خاتون نے مارچ میں ہونے والے اس واقعے کے بارے میں جب پولیس کو بتایا تو ان پر غیر ازدواجی روابط رکھنے، شراب نوشی اور جھوٹا الزام لگانے کی فردِ جرم عائد کر دی گئی۔

اس کیس کی وجہ سے ناروے میں انسانی حقوق کی تنظیمیں شدید ناخوش تھیں۔

ڈیبرا دالیلو کا کہنا تھا کہ وہ چھ مارچ کوچند ساتھیوں کے ساتھ رات کو باہر گئی ہوئی تھیں جب ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی۔

جب انھوں نے یہ بات پولیس کو بتائی تو پولیس نے اُن کا پاسپورٹ اور ان کے پیسے ضبط کر لیے گئے اور چار روز بعد ان پر غیر ازدواجی روابط رکھنے، شراب نوشی اور جھوٹا الزام لگانے کی فردِ جرم عائد کر دی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ جس شخص نے ان پر حملہ کیا اسے بھی غیر ازدواجی روابط رکھنے اور شراب نوشی کے جرم میں تیرہ ماہ کی سزا سنائی گئی۔

اسی بارے میں