فوکو شیما: تابکاری سے آلودہ پانی کا اخراج

Fukushima
Image caption فوکوشیما پلانٹ میں آلودہ پانی کو ذخیرہ کرنے کے لیے سینکڑوں ٹینک بنائے گئے ہیں جن میں سے کئی اسی طرح سنہ دو ہزار بارہ میں لیک کر گئے تھے۔

جاپان کے جوہری پلانٹ فوکو شیما کے ایک آپریٹر کا کہنا ہے کہ تابکاری سے آلودہ پانی کے ایک ٹینک سے پانی خارج ہو کر زمین پر گر گیا ہے۔

ٹوکیو الیکٹرک پاور کمپنی (ٹیپکو) کا کہنا ہے کہ پیر کو معلوم ہوا ہے کہ اس ٹینک سے تین سو ٹن آلودہ پانی خارج ہو چکا ہے۔

جاپان کا یہ جوہری پلانٹ دو ہزار گیار میں آنے والے زلزلے سے اور سونامی سے متاثر ہوا تھا۔ اس کے بعد اس میں تابکاری سے آلودہ پانی کے اخراج اور بجلی کی فیل ہونے کے واقعات مسلسل پیش آ رہے ہیں۔

سونامی کی باعث اس پلانٹ کو ٹھنڈا رکھنے کے نظام کو نقصان پہنچا تھا اور اس کے تین حصے حدّت سے پگھل گئے تھے۔

ٹیپکو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ اس کے ایک اہلکار نے پیر کی صبح دریافت کیا کہ پلانٹ سے آلودہ پانی خارج ہو رہا ہے۔

حکام نے اس اخراج کو درجہ اوّل کا حادثہ قرار دیا ہے۔ تابکاری کو جانچنے کے لیے بین الاقوامی معیار میں یہ کم ترین درجہ ہے۔

تاہم یہ پہلی بار ہے کہ دو ہزار گیارہ کے زلزلے اور سونامی کے بعد جاپانی حکام نے خود ایسے کسی واقعے کو ظاہر کیا ہے۔

تابکاری کے خطرے کی انتہائی حد سے پہلے سات درجات ہوتے ہیں۔ درجہ ’صفر‘ جہاں کوئی خطرہ نہیں ہوتا، پھر درجہ ایک سے تین جس میں کسی ’واقعے‘ کی نشاندہی کی جاتی ہے، جبکہ چار سے سات تک کے درجوں میں کسی ’حادثے‘ کی نشاندہی اور شدت واضح کی جاتی ہے۔

جوہری پلانٹ میں تابکاری سے آلودہ پانی کے لیے بنے ایک تالاب سے پانی ایک سو ملی سیورسٹز ( millisieverts) فی گھنٹہ خارج ہو رہا ہے۔

ٹیپکو کے جنرل منیجر میسیوکی اونو نے برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ’ایک سو ملی سیورسٹز کا مطلب ہے کہ اتنی تابکاری جس کا سامنا جوہری پلانٹ میں کام کرنے والے افراد کو پانچ سال میں کرنا پڑتا ہے۔ یعنی خارج ہونے والے تابکاری اتنی شدید ہے کہ یہ کہا جا سکتا ہے کہ پانچ سال کی مقدار کا سامنا آپ کو ایک گھنٹے میں کرنا پڑا رہا ہے‘۔

ٹیپکو کے حکام نے منگل کو ایک نیوز کانفرانس میں بتایا یہ آلودہ پانی کنکریٹ کی رکاوٹ پار کرنے کے بعد ٹینک سے خارج ہوا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ اس ٹینک سے پانی کو نکال کر دوسری جگہ منتقل کیا جا رہا ہے۔

اس پلانٹ میں آلودہ پانی کو ذخیرہ کرنے کے لیے سینکڑوں ٹینک بنائے گئے ہیں جن میں سے کئی اسی طرح سنہ دو ہزار بارہ میں اخراج ہوا تھا۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ٹیپکو کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اب آلودہ مٹی کو بھی محفوظ کرے تاکہ ارد گرد کے ماحول کو آلودہ ہونے سے بچایا جا سکے۔حکام کا کہنا ہے کہ تاحال پلانٹ کے باہر تابکاری کی سطح میں کوئی اضافہ نہیں ہوا ہے۔

اسی بارے میں