ملالہ یوسفزئی کا برمنگھم کی لائبریری کا افتتاح

Image caption لائبریری کا افتتاح کرنے پر فخر محسوس کرتی ہوں: ملالہ یوسفزئی

پاکستان کی وادی سوات میں طالبان کے حملے میں زخمی ہونے والی ملالہ یوسف زئی نے برطانوی شہر برمنگھم میں یورپ کی سب سے بڑی پبلک لائبریری کا باضابط افتتاح کر دیا ہے۔

اس لائبریری پر اٹھارہ کروڑ نوے لاکھ برطانوی پاؤنڈ لاگت آئی ہے اور اس میں عوام کے لیے دو سو کمپیوٹرز، تھیٹر، ایک نمائشی گیلری اور موسیقی کے لیے وقف کمرے شامل ہیں۔ کتب خانے میں دس لاکھ کتابیں موجود ہیں۔

شدت پسند تعلیم کی طاقت سے خوفزدہ ہیں:ملالہ

منگل کو لائبریری کے افتتاح کے موقع پر ملالہ یوسفزئی نے برازیل کے عالمی شہرت یافتہ مصنف پاؤلو کوئلو کے مشہور ناول الکیمسٹ کی اپنی کاپی لائبریری میں رکھی۔

اس کے علاوہ ملالہ یوسفزئی کو لائبریری کے آرکائیو تک رسائی کی رکنیت بھی دی گئی۔

ملالہ نے افتتاح کے موقع پر اپنے خطاب میں کہا’میں بہت فخر محسوس کرتی ہوں کہ اس لائبریری کو ایک خاتون نے ڈیزائن کیا اور ایک شہر میں جو پیارے پاکستان کے بعد میرا دوسرا گھر ہے‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ’یہ شہر انگلینڈ کا دھڑکتا ہوا دل ہے، برمنگھم میرے لیے بہت خاص ہے کیونکہ میں نے گولی لگنے کے کئی دنوں بعد خود کو یہاں زندہ پایا‘۔

’اس شہر کے عظیم لوگوں نے میری ہمت افزائی کی اور اس تقریب سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ شہر مجھ سے محبت کرتا ہے اور میں بھی اسے پیار کرتی ہوں‘۔

Image caption لائبریری میں ایک وقت میں تین ہزار لوگ آ سکتے ہیں

لائبریری کے ڈائریکٹر اور لائبریری کے منصوبے سے گزشتہ سات سال سے منسلک برائن گیمبلز نے کہا’لائبریری کے بارے میں ہمارے تصور میں روایت اور جدت کی آمیزش بلکل اصل جزو ہے‘۔

اس کتب خانے میں شیکسپیئر کا میموریل روم بھی شامل ہے، جس میں تینتالیس ہزار کتابیں موجود ہیں۔

ملالہ یوسف زئی پرگزشتہ سال اکتوبر میں سوات کے مرکزی شہر مینگورہ میں اس وقت حملہ کیا گیا جب وہ وین میں سکول سے گھر واپس آ رہی تھیں۔حملے میں زخمی ہونے کے بعد ملالہ کا علاج پاکستان میں کیا گیا اور بعد میں برطانوی شہر برمنگھم علاج کے لیے منتقل کر دیا گیا اور اب صحت یابی کے بعد وہ اسی شہر میں مقیم ہیں۔

اسی بارے میں