عمارت نے کار ’پگھلا دی‘

لندن میں زیرِ تعمیر عمارت جسے ’واکی ٹاکی‘ کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ اس سے منعکس ہونے والی روشنی کی وجہ سے ایک کار کے حصے پگھل گئے۔

لندن کے ایک شہری مارٹن لنڈزے نے اپنی جیگوار کار ایسٹ چیپ کے علاقے میں اپنی کار پارک کی۔

جب وہ دو گھنٹے کے بعد واپس پہنچے تو انہوں نے دیکھا کہ ان کی کار کے سائیڈ والے شیشے اور بیج پگھل چکے تھے۔

لنڈزے نے کہا اس نقصان کا ’انہیں یقین نہیں آیا‘۔

عمارت کی تعمیر کرنے والی کمپنی نے انہیں ان کے نقصانات کا معاوضہ کر دیا ہے۔

لندن کی فِن چرچ سٹریٹ میں واقع اس سینتیس منزلہ کو واکی ٹاکی اس کی شکل کی وجہ سے کہا جاتا ہے۔

لنڈزے نے کہا کہ ’میں سڑک پر جا رہا تھا کہ میں نے دیکھا ایک فوٹوگرافر تصاویر لے رہا تھا تو میں نے پوچھا کہ کیا ہو رہا ہے؟‘

فوٹوگرافر نے مجھے بتایا کہ ’کیا تم نے یہ کار دیکھی ہے؟ اس کا مالک کچھ زیادہ خوش نہیں ہو گا‘۔

میں نے اس کو جواب دیا ’میں اس کار کا مالک ہوں اور یہ بہت برا ہوا‘۔

لنڈزے نے کہا کہ ان کی کار کے سائیڈ مرر اور جیگوار کی نشانی جو کار کے آگے لگی ہوتی ہے پگھل چکی ہے۔

آپ یقین نہیں کریں گے کہ ایسی چیز ہو سکتی ہے ’انہیں اس کے بارے میں کچھ کرنا چاہیے‘۔

Image caption گاڑی کے آگے لگا ہوا یہ نشان بھی پگھل گیا۔ فائل فوٹو

’یہ نقصان دِہ بھی ہو سکتی ہے سوچیں اگر سورج ایک حصے پر زیادہ پڑ جائے‘

انہوں نے بتایا کہ ’میری کار ونڈ سکرین پر ایک نوٹ تعمیراتی کمپنی کی جانب سے لکھا ہوا تھا جس میں لکھا تھا ’آپ کی کار میں مسئلہ ہے اگر آپ ہمیں کال کر لیں‘۔

کنیری وارف اور عمارت کی تعمیراتی کمپنی نے ایک بیان میں کہا کہ ’ہمیں اس مسئلے کا علم ہے اور ہم اس کا جائزہ لے رہے ہیں‘۔

سٹی آف لندن نے حفظ ماتقدم کے تحت اس عمارت کے قریبی علاقے میں تین بارکنگ لائنوں کو بند کر دیا ہے جب تک اس معاملے کی تحقیقات نہیں ہو جاتیں۔

لنڈزے نے کہا کہ تعمیراتی کمپنی نے ان سے معذرت کی ہے اور ان کی کار کے مرمت پر اٹھنے والے 946 پاؤنڈز کے اخراجات ادا کرنے پر اتفاق کیا ہے۔