اٹلی: طغیانی کے باوجود تلاش کی امید باقی

Image caption جمعہ کوبحیرہ روم میں طغیانی کی وجہ سے تلاش کا کام وقتی طور پر روک دیا گيا تھا

اطالوی جزیرہ لامپیدوس میں کشتی کے حادثے میں مرنے والے 200 افراد کی لاشوں کو تلاش کرنے کے کام کو از سر نو شروع کرنے کے لیے غوطہ خور پر امید ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ اب سے تھوڑی دیر بعد تلاش کا کم شروع کر دیا جائے گا۔

واضح رہے اس سے قبل کشتی کے حادثے میں لاپتہ ہونے والے قریب دو سو افراد کی تلاش سمندر میں طغیانی کے باعث جمعہ کو وقتی طور پر روک دی گئی تھی۔

اٹلی:113 ہلاکتیں، 200 افراد تاحال لاپتہ ہیں

تارکین وطن کی کشتی غرقاب

اٹلی کے ساحلی محافظوں کے ترجمان فلپّو میرینی نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ’ہر چند کہ سمندر میں اب بھی طغیانی ہے لیکن اگر کشتی کے اندر جانے کے لیے کوئی دروازہ کھلتا ہے تو ہمارے غوطہ خور نیچے جانے کے لیے تیار ہیں کیونکہ یہ ان کے لیے محفوظ ہوگا‘۔

شروع میں لاشوں کو نکالنے کی یہ مہم لامپیدوس کے علاقے میں ریبٹ جزیرے پر مرکوز رہی لیکن اب اس کے دائرے کو وسیع کر دیا گیا ہے۔

غوطہ خوروں کا کہنا ہے کہ انھوں نے کشتی پر خوفناک مناظر دیکھے ہیں۔

بی بی سی کے ایلن جانسٹن کا کہنا ہے کہ اطالوی باشندے اس حادثے سے صدمے کے عالم میں ہیں اور یہ اٹلی کے تاریکین وطن کا سب سے بڑا حادثہ ہے۔

Image caption کشتی پر سوار زیادہ تر لوگوں کا تعلق افریقی ممالک صومالیہ اور ایریٹیریا سے تھا

اٹلی میں حکام کا کہنا ہے کہ ابھی تک 111 لاشوں کو تلاش کر لیا گیا ہے جبکہ 155 افراد کو بحیرہ روم کے اس جزیرے سے ایک کلومیٹر کے فاصلے سے زندہ بچا لیا گیا ہے۔

توقع ظاہر کی جا رہی ہے کہ جہاں کشتی غرقاب ہوئی تھی وہاں سے مزید نعشیں برآمد ہو سکتی ہیں۔

اقوامِ متحدہ کے ادارۂ برائے پناہ گزیناں کے مطابق کشتی پر سوار زیادہ تر افراد کا تعلق افریقی ممالک صومالیہ اور ایریٹیریا سے تھا۔

کشتی کے حادثے میں زندہ بچ جانے والے افراد کا کہنا ہے کہ جب وہ سب لامپیدوس کے قریب پہنچ رہے تھے اس وقت اس 20 میٹر لمبی کشتی کا انجن خراب ہو گیا تھا اور اس کے اندر پانی داخل ہونے لگا تھا۔

اس وقت کشتی میں سوار بعض لوگوں نے دوسری کشتیوں اور جہازوں کو متوجہ کرنے کی غرض سے آگ جلائی جو کہ پوری کشتی میں پھیل گئی۔

لیبیا کی بندرگاہ مصراتہ سے آنے والی یہ کشتی اس وقت غرقاب ہونے لگی جب آگ سے بچنے کے لیے کشتی پر سوار سارے لوگ کشتی میں ایک طرف آگئے۔

یواین ايچ سی آر کی رپورٹ کے مطابق سنہ 1988 سے اب تک اس طرح کے حادثے میں یورپ کا رخ کرنے والے 19142 غیر قانونی تاریکین وطن ہلاک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں