چینی کے دل کے تاروں کو دہشت گردوں سے خطرہ

Image caption ڈک چینی دل کے مریض ہیں اور ان کی عمر بہتر برس کی ہے

امریکہ کے سابق نائب صدر ڈک چینی نے انکشاف کیا ہے کہ انہوں نے دہشت گردوں کے ڈر سے اپنے دل کی دھڑکن کو معمول پر رکھنے والے آلے میں تبدیلیاں کروائیں تھیں۔

ڈکی چینی کے معالجوں نے سنہ دو ہزار سات میں ان کے دل کی دھڑکن کو معمول پر رکھنے کے لیے نصب آلے کے تاروں کے بغیر کام کرنے کے نظام کو غیر فعل کر دیا تھا تاکہ کوئی بھی اس نظام میں خلل نہ ڈال سکے۔

امریکہ میں ٹی وی پر چلنے والی ایک سیریز ’ہوم لینڈ‘ میں بھی اس طرح کی کہانی کی ڈرامہ بندی کی گئی تھی۔

ڈک چینی نے سی بی ایس ٹی وی کے پروگرام ’سکسٹی منٹ‘ میں کہا کہ انھیں یہ بالکل حقیقت پر مبنی لگا۔

ڈک چینی نے کہا کہ وہ اپنے تجربے کی روشنی میں کہہ سکتے ہیں کہ میرے دل میں آلے میں تبدیلی کی ضرورت تھی اور اس ڈرامے میں جو کچھ دکھایا گیا وہ حقیقت میں مکمن ہے۔

چینی صدر بش کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ان کے دستِ راست تھے۔

امریکی سکیورٹی کمپنی ڈمبالا کے گلوبل ٹیکنیکل کنسلٹنٹ ایڈرین کولے کے مطابق ’امپلانٹ ایبل کارڈیورٹر ڈیفبریلیٹرز ‘ کو مختلف اقسام کے الیکٹرانک لہروں سے خطرہ ہو سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ ایسے کس بھی شخص جس کے دل کی دھڑکن کو معمول پر رکھنے کا آلہ نصب ہو اس کی دھڑکن کو قریب آ کر خراب کیا جاسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ڈکی چینی پر اس قسم کے حملے کا امکان بہت ہی کم تھا۔

’آئی سی ڈی‘ مانیٹرز دل کی دھڑکن کی نگرانی کرتے ہیں اور اگر اس میں کسی قسم کی تبدیلی ہوتی ہے تو یہ برقی لہریں دل کی طرف بھیجتے ہیں جس سے دھڑکن معمول پر آ جاتی ہے۔

سنہ دو ہزار آٹھ میں واشنگٹن یونیورسٹی، یونیورسٹی آف میساچوسٹ ایمرہسٹ اور ہاورڈ میڈیکل سکول کے ماہرین نے دعوی کیا تھا کہ آئی سی ڈیزپر کو ریڈیو کی لہروں کے ذریعے خراب کیا جا سکتا ہے جو مریض کی زندگی کے لیے خطرہ بن سکتا ہے۔

امریکی ہارٹ ایسوسی ایشن نے ایسے دل کے مریضوں کو جن کے دل میں یہ آئی سی ڈیز لگائے گئے ہیں خبردار کیا ہے کہ وہ مختلف قسم کے برقی آلات سے دور رہیں جن میں موبائل فون، میٹل ڈیٹیکٹر اور سی بی ریڈیوز شامل ہیں۔

دل کے امراض کے ماہر جوناتھن رینر نے ڈک چینی کے ساتھ مل کر ایک کتاب لکھی ہے جس میں نائب صدر کے دل کی تکلیف کی تفصیل بیان کی گئی ہے۔

جوناتھن رینر نے ٹی وی پروگرام سکسٹی منٹ میں بتایا کہ گیارہ ستمبر دو ہزار ایک میں امریکہ پر القاعدہ کے حملوں کے وقت ڈک چینی کے خون میں پوٹاشیم کی مقدار اچانک بڑھ گئی تھی جس سے دل کی دھڑکن بند ہو سکتی تھی۔

ڈاکٹر رینر کا کہنا ہے اس رات ڈک چینی کا حرکت قبل بند ہونے سے انتقال ہو سکتا تھا۔ ڈک چینی کے دل کا مرض پرانا ہے اور گزشتہ سال ان کا ہارٹ ٹرانسپلانٹ کا آپریشن ہوا تھا۔

اسی بارے میں