منڈیلا کی یاد منانے کے لیے ہزاروں کا اجتماع

Image caption نسل پرستی کے خلاف جدوجہد کی علامت بننے والے نیلسن منڈیلا 95 سال کی عمر میں انتقال کر گئے تھے

جنوبی افریقہ میں منگل کو سرکاری سطح پر ملک کے پہلے سیاہ فام صدر آنجہانی نیلسن منڈیلا کی آخری رسومات ادا کی گئی ہیں۔

جوہانسبرگ میں منڈیلا کی یاد میں منعقدہ دعائیہ تقریب میں درجنوں عالمی رہنماؤں سمیت ہزاروں افراد شریک ہوئے۔

نیلسن منڈیلا کو خراجِ تحسین پیش کرنے والوں میں امریکی صدر براک اوباما اور اقوام متحدہ کے جنرل سیکریٹری بان کی مون سمیت 90 عالمی رہنما بھی شامل تھے۔

نیلسن منڈیلا: نسل پرستی کے خلاف جدوجہد کی علامت

منڈیلا کی زندگی پر ایک نظر

اس تقریب کا انعقاد ایف این بی سٹیڈیم میں ہوا جہاں 95 ہزار افراد کی گنجائش ہے۔اس کے علاوہ تین مزید سٹیڈیموں بڑی سکرینوں پر یہ تقریب براہِ راست دکھائی گئی۔

نسل پرستی کے خلاف جدوجہد کی علامت بننے والے نیلسن منڈیلا گذشتہ جمعرات کو 95 سال کی عمر میں انتقال کر گئے تھے۔

Image caption نیلسن منڈیلا کا جسدِ خاکی دعائیہ تقریب کے بعد تین دن تک دارالحکومت پریٹوریا میں رکھا جائے گا

جوہانسبرگ میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ بارش کے باوجود ہزاروں افراد نیلسن منڈیلا کے عکس والی ٹی شرٹس پہنے سٹیڈیم کے اندر جمع تھے اور وہ منڈیلا کی مدح میں اور جنوبی افریقہ میں نسل پرستی کے خلاف لڑائی کے زمانے کے گانےگا کر محوِ رقص تھے۔

نامہ نگار جو ونٹر کا مزید کہنا ہے کہ اس ہجوم میں بہت سے لوگوں نے سٹیڈیم میں داخلے سے قبل رات بھی وہیں گزاری تھی۔

منگل کو ایف این بی سٹیڈیم میں ہونے والی دعائیہ تقریب کو گذشتہ چند سالوں میں عالمی رہنماؤں اور معروف شخصیات کا سب سے بڑا اجتماع قرار دیا گیا ہے۔

سوکر سٹی کے نام سے معروف یہ سٹیڈیم جوہانسبرگ کے مضافاتی علاقے سووتو میں ہے۔ آخری بار نیلسن منڈیلا یہاں پر 2010 میں فٹبال کے عالمی کپ کی تقریب کے سلسلے میں دیکھے گئے تھے جو کسی عوامی تقریب میں ان کی آخری شرکت تھی۔

اس تقریب میں جنوبی افریقہ کے صدر جیکب زوما کے علاوہ امریکی صدر براک اوباما، برازیلی صدر دیلما رؤسف اور کیوبا کے صدر راؤل کاسترو نے بھی شرکا سے خطاب کریں گے۔

راؤل کاسترو کے بھائی فیدل کاسترو کے دورِ حکومت میں کیوبا جنوبی افریقہ میں نسل پرستی کے شدید ترین ناقدین میں سے ایک ملک تھا اور نیلسن منڈیلا ان کی حمایت کے لیے ممنون بھی تھے۔

نیلسن منڈیلا کے چار نواسے نواسیاں بھی اس موقع پر تقاریر کیں۔ ان کے علاوہ نیلسن منڈیلا کے رابن آئی لینڈ کی جیل کے ساتھی اینڈرو ملانجنی بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

برطانوی وزیرِاعظم ڈیوڈ کیمرون بھی منگل کے روز دعائیہ تقریب میں شریک تھے۔ ان کے علاوہ برطانیہ کے نائب وزیرِ اعظم نِک کلیگ، لیبر پارٹی کے رہنما ایڈ ملی بینڈ اور سابق وزرائے اعظم گورڈن براؤن، ٹونی بلیئر اور جان میجر بھی وہاں موجود تھے۔

تین سابق امریکی صدور جارج بش، جمی کارٹر اور بل کلنٹن بھی نیلسن منڈیلا کو خراجِ تحسین پیش کرنے کے لیے جوہانسبرگ پہنچے۔

Image caption براک اوباما کے علاوہ تین سابق امریکی صدور بھی جوہانسبرگ پہنچے ہیں

فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس، زمبابوے کے صدر رابرٹ موگامبے اور بھارت اور پاکستان کے صدور بھی نیلسن منڈیلا کی آخری رسومات کے سلسلے میں منعقد کی جانے والی اس تقریب میں موجود رہے۔

منڈیلا کے انتقال کے بعد سے جنوبی افریقہ میں لاکھوں افراد ان کے لیے مختلف دعائیہ تقریبات میں شرکت کر رہے ہیں، مختلف مذاہب کے افراد کی جانب سے خصوصی عبادات کی جا رہی ہیں اور یہ سلسلہ اتوار کو ان کی تدفین تک جاری رہے گا۔

نیلسن منڈیلا کے جسدِ خاکی کو اس دعائیہ تقریب کے بعد تین دن تک دارالحکومت پریٹوریا میں رکھا جائے گا اور اتوار، 15 دسمبر کو سرکاری سطح پر ان کی آخری رسومات ادا کر دی جائیں گی۔

ایسٹرن کیپ کے علاقے میں منڈیلا کے آبائی گاؤں کینو میں ان کی تدفین کے موقع پر بھی کچھ عالمی شخصیات موجود ہوں گی جن میں برطانوی ولی عہد شہزادہ چارلز بھی شامل ہیں۔

اسی بارے میں